Home | Columns | Poetry | Opinions | Biography | Photo Gallery | Contact

Friday, March 16, 2018

اب خوب ہنسے گا دیوانہ


اوراق پارینہ میں حفیظ جالندھری کی دو نظمیں ہاتھ آئی ہیں ۔یہ المیہ ہے کہ اب ان کی تصانیف کمیاب بلکہ نایاب ہیں ۔بچوں کے لیے بھی انہوں نے کمال کی نظمیں کہیں،وہ بھی کہیں نہیں ملتیں۔

دونوں نظمیں قارئین سے شیئر کی جارہی ہیں۔ کیا خبر آج کےسیاسی اور سماجی حالات پر منطبق نظر آئیں ۔
شیر!
شیروں کی آزادی ہے
آزادی کے پابند رہیں
جس کو چاہیں چیریں پھاڑیں
کھائیں پئیں ، آنند رہیں
سانپوں کو آزادی ہے
ہر بستے گھر میں بسنے کی
اور عادت بھی ہے ڈسنے کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاہین کو آزادی ہے
آزادی سے پرواز کرے
ننھی منی چڑیوں پر
جب چاہے مشق ناز کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پانی میں آزادی ہے
گھڑیا لوں اور نہنگوں کو
جیسے چاہیں پالیں پوسیں
اپنی تند امنگوں کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انسان نے بھی شوخی سیکھی
وحشت کے ان رنگوں سے
شیروں سانپوں شاہینوں
گھڑیالوں اور نہنگوں سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انسان بھی کچھ شیر ہیں
باقی بھیڑوں کی آبادی ہے
بھیڑیں سب پابند ہیں لیکن
شیروں کو آزادی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شیر کے آگے بھیڑیں کیا ہیں
اک من بھاتا کھا جا ہے
باقی ساری دنیا پر جا
شیر اکیلا راجہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھیڑیں لاتعداد ہیں لیکن
سب کو جان کے لالے ہیں
ا ن       کو         یہ        تعلیم        ملی
بھیڑیے طاقت والے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماس بھی کھائیں
کھال بھی نوچیں
ہر دم لاگو جانوں کے
  بھیڑیں دور غلامی کاٹیں
بل پر گلہ بانوں کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شیر ہیں دعویدار کہ ہم سے
امن ہے اس آبادی کا
بھیڑیں جب تک شیر نہ بن لیں
نام نہ لیں آزادی کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انسانوں میں سانپ بہت ہیں
قاتل بھی زہریلے بھی
ان سے بچنا مشکل ہے
  آزاد بھی ہیں پھرتیلے بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سانپ تو بننا مشکل ہے
اس خصلت سے معذور ہیں ہم
منتر جاننے والوں کی
محتاجی پر مجبور ہیں ہم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاہیں بھی ہیں چڑیاں بھی ہیں
انسانوں کی بستی میں
ان کو ناز بلندی پر
یہ نازاں اپنی پستی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گرمی
اب سورج سر پر آ دھمکے گا
ٹھنڈا لوہا چمکے گا
اور دھوپ جواں ہوجائے گی
سٹھیائے ہوئے فرزانوں پر
اب زیست گرا ں ہوجائے گی
اب اصل عیاں ہوجائے گی
 اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب آگ بگولے ناچیں گے
سب لنگڑے لُولے ناچیں گے
گردابِ بل بن جائیں گے
روندی ہوئی مٹی کے ذرے
طوفانِ بلا بن جائیں گے
صحرا دریا بن جائیں گے
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
اب سستی جال بچھائے گی
اب دھونس نہ چلنے پائے گی
مزدوروں اور کسانوں پر
اب سوکھا لہو نچوڑنے والے
روئیں گے نقصانوں پر
ان کھیتوں اور کھلیانوں پر
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب پیلی دھات کی بیماری
پھیلا نہ سکیں گے بیوپاری
لوہے کا لوہا ما نیں گے
سونے کی گہری کانوں میں
سو جانا بہتر جانیں گے
در در کی خاک نہ چھانیں گے
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب خون کے ساگر کھولیں گے
انسان کے جوہر کھولیں گے
چڑھ جائے گی تپ صحراؤں کو
اٹھے گی اُمڈ کرلال آندھی
پی جائے گی دریا ؤں کو
باندھے گا تند ہواؤں کو
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہر زلف سے بچھو لپکیں گے
آنکھوں کے شرارے لپکیں گے
صیادوں حسن شکاروں پر
پھوٹے کا پسینہ غصے کا
  موتی بن کر رخساروں پر
اس دھوپ میں چاند ستاروں پر
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب دودھ نہ دیں گی بھینیسں گائیں
اف اف کرنے لگیں گی مائیں
بچے مم مم چیخیں گے
اب اونگنھے والے نکھٹو شوہر
عقل مجسم چیخیں گے
سب درہم برہم چیخیں گے
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب خانقہوں کی  مردہ اداسی
روز اول کی بھوکی پیاسی
جھومے گی میخانوں پر
اب ساقی منچے،پیر مغاں
بیچیں گے وعظ دکانوں پر
اب  زہر بھرے پیمانوں پر
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زور آوری سے کمزوروں کی
 اب جیب کٹے گی چوروں کی
اور منڈی ساہو کاروں کی
اک بھوکی “ہو’ حق” سیر کرے گی
منڈیوں اور بازارو ں کی
گت دیکھ کے دنیاداروں کی
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیسا دل گردہ ڈھونڈ ے گا
ہر زندہ مردہ ڈھونڈے گا
کوئی کونا کھدرا تہہ خانہ
اب ہر جنگل میں منگل ہوگا
ہر بستی میں ویرانہ
اک نعرہ لگا کر مستانہ
اب خوب ہنسےگا دیوانہ 
سردی
اب جاڑا جھنڈے گاڑےگا 
اور فیل فلک چنگھاڑے گا
اب بادل شور مچائیں گے
اب بھوت فلک پر چڑ ھ دوڑیں گے
دھرتی کو دہلائیں گے
ہنسنے کے مزے اب آئیں گے
اب خوب ہنسےگا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایوان کریں گے بھائیں بھائیں
پھونس کی جھونپڑیوں میں ہوائیں
سائیں سائیں گونجیں گی
اس گونج میں بھوکے ننگوں کی
سنسان صدائیں گونجیں گی
ویران سرائیں گونجیں گی
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب بجلی کے کوڑوں سے ہوا
شمشیر بکف،زنجیر بپا
لوہے کے رتھوں کو ہانکے گی
ایک ایک دھوئیں کے محمل سے
صد حسن کی ملکہ جھانکے گی
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تخریب کی توپیں چھوٹیں گی
تعمیر کی کلیاں پھوٹیں گی
ہر گور ستانِِ شاہی میں
بالائے ہوا’ زیر دریا
غل ہوگا مرغ دماغی میں
اس نو آباد تباہی میں
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ناگن با بنی گرمائے گی
سانپ کی لانی لہرائے گی
کالے آتش دانوں میں
دانائیاں کینچلی بدلیں گی
شہروں کے بندی خانوں میں
اور دور کھلے میدانوں میں
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بُھس خالی پیٹ میں بھر نہ سکے گا
کوئی تجارت کر نہ سکے گا
سکڑی سکڑی کھالوں کی
اب منڈھ بھی جائے تو بچ نہ سکے گی
نوبت پیسے والوں کی
بیکاری پر دلالوں کی
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب دال نہ جاگیروں کی گلے گی
آگ مگر دن رات جلے گی
چمڑے کے تنوروں میں
اب کال پڑے گا غلے کا
بیوپاروں ،بے مقدوروں  میں
اور پیٹ بھرے مزوروں میں
اب خوب ہنسے گا دیوانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب گاڑھا   پسینہ بننے والے
اوڑھے پھریں گے شال دوشالے
مفت نہ جھولی جھولیں گے
پھولے ہوئے گال اب پچکیں گے
پچکی ہوئی توند پھولیں گی
سب عقلیں چوکڑیاں بھولیں گی
اب خوب ہنسے گا دیوانہ !!!


 

powered by worldwanders.com