Home | Columns | Poetry | Opinions | Biography | Photo Gallery | Contact

Sunday, February 28, 2010

Pakistan Civil Service : Concubine Of politicians

The bald headed gentleman, with grey sideburns and a face to which crinkles had started making inroads, was fuming. “Do I deserve all this? I have given prime period of my life to Public Service. I served for more than three decades honestly and selflessly. On my retirement, the government allots me a plot in the capital city on which I cannot raise a house during at least next ten years… or maybe more but who will survive by that time? And who cares?”

“Your problem is genuine” I intervened. “You are not the only one facing this--- but then, what is the solution?”

“Solution is simple” he says. “Hand over this task to Pakistan Army and I assure you that every civil servant will be able to start constructing his house on the next day of his retirement, if not earlier.”

Burst out by this tormented retired public servant reminds one of readers’ letters which keep on appearing in national dailies impressing on the Government to assign the civil housing schemes to Defence.

That more than half of our national history stands blemished by Military despots should, in no way, attribute the evil act to the Armed Forces as an institution. If commanders did not revolt against the usurper chiefs as they used to do in Turkish and Mughal eras, it has been a blessing in disguise . The nations whose Forces stand divided and split themselves for and against the coups, have been envied neither by their contemporaries nor by history. Intermittent but long military rule over the land in no way proves that the Forces, as a whole, affirmed it.

Pakistan Armed Forces ,as institution, in fact are lagging behind no other country’s Force. Their organizational structure and system of monitoring and accountability can be peered only by the corporate sector of developed countries. On the contrary, Civil Government’s performance has been in shambles. Take for examples Army Housing Scheme. It was conceived and launched in early eighties. The objective was to provide a house of appropriate level compatible with the contribution made during his service, to every Army officer at the time of his retirement. Since then the criterion which was laid down at the time of inception, has never undergone any change. Every member of the scheme, without running from pillar to post, is handed over the key of the house at the time of retirement. On the contrary, the scheme to shelter the civil servants , initiated in 1988, has only added insult to injury. Whenever a new phase was launched (four till now) the criterion underwent a “custom made” modification. I can vividly recall when the first phase of Housing Foundation (of Federal Government) was set off in 1988. Mr. Saleem Bahadur Khan, a direct descendent of Hafiz Rahmat Khan Roheela, was working as Financial Adviser of Pakistan Air Force, a part of Ministry of Finance. He was a man of traditions. Many big shots of the then Air Force learnt bridge from him. When he applied for the house in the First Phase, the Federal Ministry of Housing “informed” him that since he was already in ownership of a house, his application could not be entertained. Saleem Bahadur Khan, being a pure Roheela, had a commendable sense of humour. He wrote back to the Ministry to let him know the whereabouts of “his” new found house so that he could, without any delay, occupy it! The mystery was solved later on when it transpired that the honourable Minister, whosoever was at that time, wanted to shower the bounty on someone else whom the criterion could not accommodate.

Why does the fuming Civil Servant want that the matter of his welfare be handled by the Army? There is only one reason for this. The Armed Forces, as institution, are the most organized in the country. Punctuality, meeting the target within the fixed time period, responding back and, above all, taking effective and tangible measures towards welfare of officers and other ranks – these are some of the ingredients our Armed Forces possess and unfortunately the civil set up lacks completely. Just compare the number of Director Generals of Army Housing Directorate with the number of secretaries who have been in charge of Ministry of Housing and Works during last twenty or twenty five years and you will come to know the magnitude of “seriousness” with which the Federal Government has been managing its affairs. A compilation of the data scattered on the wooden boards hanging on the walls of Civil Servants’ offices will make an interesting study. A substantial part of the national exchequer has been ‘consumed’ on the grandiloquent and boastful courses of HRM and personnel administration held in Harvard and other prestigious institutions but these wooden boards make a mockery of all this tax payers’ money. These boards testify “tenures” of few months and in many cases few weeks! Civil Servants, with varying might and connections, have been using “less attractive” slots as stepping stones and transit lounges. The ill-connected are the wretched ones. Those who are without posting are advised blatantly by establishment Division, to look for some “sponsor”. Postings abroad have been even greater mockeries. Find out the record of past twenty or thirty years. Who have been the privileged ones to get stationed at promised lands? Mostly deputy Commissioners of Islamabad, Rawalpindi, Lahore and Karachi ! why? For obvious reasons! They have to be at the air port many times a day. And if you are lucky to be elevated as Principle Secretary to the Prime Minister, you are blessed with Aladdin ‘s lamp. Look at just the recent history. What are the present whereabouts of the previous principal secretaries? World Bank Washington, Asian Bank Manila, Ombudsman and lucerative Authorities like NEPRA making whoopee for five years period after superannuating at the age of sixty and who bothers whether you are technically and professionally qualified for these jobs which are essentially meant for technocrats!

Let us be honest and agree that such audacious lawlessness has not made surreptitious inroad in Armed Forces set up---at least so far . Yes. They do offer jobs to their retired senior officers but they follow a method in madness. They offer vacant slots of their subsidiary organizations, like foundations, to all retired Generals, Air Marshalls and Admirals who either take it or leave it. Not like what is happening elsewhere ! “More equal” grade 22 (and even grade 21 ) are being sent to lucrative slots of Federal Public service commission and Federal Services Tribunal and “less equal” are kicked on their asses with such heavy thuds that they fall in the premises of the houses which even do not belong to them! Multiply this favoritism with hundred and you get what is happening in the provinces!

The inability, so far, of political elements to make inroads into Armed Forces’ internal decision making process is a great blessing for the country in general and Defence in particular. There cannot be two opinions about the anarchy prevailing in administration of civil service and in non Defence Sector on the whole. Unjustified promotions and indefensible supersessions have been plaguing the system since long just because of whims of myopic political leadership. Even a faithful and docile minister like late Yaseen Wattoo had to lodge a written protest to the then prime minister when an officer repeatedly disqualified for promotion by the (legally authorized) Promotion Board was elevated by “King’s” order. As the press had reported in those days, twenty eight out of thirty newly ‘recruited’ officials for FIA belonged to a particular ethnic group. Sheer personal likings and dislikings of politicians in appointing and sacking chief secretaries of provinces is another mockery, which has been going on since long. Even Arab Sheikhs do not change their wives with this rapidity. GHQ’s Military Secretary Branch is working many times more systematically, rationally and objectively than the poor Establishment Division, which practically is reduced to a “keep” of the powerful Principal Secretaries and is acting like a post office, a bit superior to the normal ones. Add to this misery, the hyper “flexibility” of almost every secretary Establishment Division which he has to show in order to ‘win’ a post-retirement lucrative assignment!

The Human Resource Management System of Pakistan Armed Forces, the key factor behind the enviable transparency is detested by Americans as well as indians. The best way to tamper with this transparency is to make it susceptible to political impulses of the ruling class. It is intriguing that the Kerry Lugar Bill opens this door. The Bill says, “An assessment of the extent to which the Government of Pakistan exercises effective civilian control of the military will be carried out regularly”. Promotions of the senior military officers too have been proposed to be brought under the civilian control.

Of course there are intrusions on the part of Armed Forces. The service-chiefs must ensure that their former two and three star buddies do not gatecrash civil departments to get hold of jobs lest the entire Defense set up is loathed. The recent appointment of a retired General as chairman Punjab Public Service Commission is a case in point. Even if some sycophant insisted, the gentleman, in all fairness, should have declined. Was he the only person who deserved this? Same is the case of the erstwhile Staff College which, for last many years, is being viceroyed by a general, who got this empire in the reign of the Commando President and still continues.


The total militarization of Ministries of Defence and Defence Production is another haughtiness, which is a classic case of anachronism as well as of total annexation of two important Federal Ministries to Armed Forces. Perpetuation of a retired three star General as Secretary Defence with three uniformed additional secretaries, one from each of the three forces, is a permanent symbol of mightiness. Compare it with the next door India. A set up with a civil servant Secretary Defence assisted by only one additional secretary who too is a civil servant speaks volumes as how strong are the institutions in that country. Indian Ministry of Defence does have three senior officers representing their respective forces but they are designated as “technical managers” and hold inconspicuous positions in the over all setup. Comparison between Defence Production Ministries portrays the same picture.

The coolheaded General Ashfaq Kiani has gone a long way to restore the blotted image of the uniform but a lot more deserves to be carried through. However the real question is :will the civil service continue to walk with a slow dragging motion without lifting its feet ??


Tuesday, February 23, 2010

صاحب کردار

پچاس ایکڑ پر بنی ہوئی کوٹھی کے گیٹ پر پولیس کا پہرا ہے۔ گیٹ سے اندر داخل ہوں تو وسیع و عریض لان پر مخمل جیسی گھاس بچھی ہے۔ اردگرد پھولوں بھری کیاریوں حاشیہ ہے۔ کیاریوں سے ہٹ کر‘ آسمان کو چھولینے والے درخت ہیں۔ فضا حکمرانی کی ہے۔ ایسی حکمرانی جس میں آسودگی کوٹ کوٹ کر بھری ہے۔ لان میں پندرہ بیس موٹے اور لمبے اشخاص کھڑے آپس میں گفتگو کر رہے ہیں۔ انہوں نے اچکنیں پہنی ہوئی ہیں اور کلف لگی سفید دستاریں سروں پر رکھی ہوئی ہیں۔ دستاروں پر طرے ہیں۔ سفید‘ اکڑے ہوئے طرے‘ یوں اوپر اٹھے ہوئے جیسے ابھی آسمان کی طرف اڈاری ماریں گے۔ انہیں کھڑے ہوئے تین چار گھنٹے ہو گئے ہیں۔ بیٹھنے کیلئے کرسیاں ندارد‘ اتنے میں اندر کا دروازہ کھلتا ہے۔ چوبدار باہر نکلتا ہے۔ اس نے بھی اچکن پہنی ہوئی ہے اور اتنا ہی اونچا طرہ پگڑی میں سے آسمان کی طرف نکالا ہوا ہے۔ یہ چوبدار لان میں کھڑے معززین کے پاس جاتا ہے اور کہتا ہے کہ صاحب نے آپ حضرات کی طرف سے عید مبارک قبول کر لی ہے۔ یہ سننا تھا کہ تمام افراد ایک دوسرے سے گلے ملنا شروع کر دیتے ہیں اور مبارک دینے لگتے ہیں

یہ واقعہ اشوک کے زمانے کا ہے نہ خلجیوں کے عہد کا۔ یہ ایک سو سال پہلے کا واقعہ ہے۔ بہت سی کتابوں میں اس کے سچا ہونے کی گواہی موجود ہے۔ طروں والے یہ افراد جاگیردار ہیں اور اندر ہی سے عید مبارک باد قبول کرکے باہر نہ آنے والا ’’صاحب‘‘ انگریز ڈپٹی کمشنر ہے!

تاریخ ایک اور واقعہ بھی بیان کرتی ہے۔ دوسری جنگ عظیم کے اردگرد‘ حالات ایسا رخ اختیار کرتے ہیں کہ انگریزوں کا برصغیر سے چل چلاؤ نظر آنے لگتا ہے۔ ایسے میں جنوبی پنجاب کے جاگیردار ملکہ برطانیہ کے نام ایک متفقہ عرضداشت لکھتے ہیں جس میں انتہائی ادب‘ لجاجت عاجزی اور جی حضوری کے ساتھ درخواست کرتے ہیں کہ انگریزی حکومت ازراہ کرم برصغیر سے کبھی نہ جائے اور ملکہ کا سایہ ان کے سروں پر قائم و دائم رہے۔ یہ عرضداشت بھی کسی ناول یا داستان کی پیداوار نہیں۔ یہ ایک حقیقت ہے۔ کتابوں میں اسی درخواست کا متن موجود ہے اور دستخط کرنے والے زمینداروں کے نام درج ہیں۔

یہ سب کچھ لکھنے کا خیال یوں آیا کہ تین چار دن ہوئے‘ پنجاب کے ایک جاگیردار ایک صحافی پر غضب ناک ہوئے ہیں۔ مزاج کی برہمی کا سبب صحافی کی یہ ’’گستاخی‘‘ ہے کہ اس نے مخاطب ہوتے وقت نام کے بعد ’’صاحب‘‘ تو لگایا لیکن نام سے پہلے ’’سردار‘‘ نہیں لگایا! اگر آپ یہ سمجھ رہے ہیں کہ یہ واقعہ نہیں لطیفہ ہے تو آپ غلطی پر ہیں۔ یہ 2010ء سہی لیکن یہ واقعہ اسی 2010ء میں پیش آیا ہے! اور سردار صاحب نے بقائمی ہوش و حواس صحافی سے غصے میں پوچھا ہے کہ آپ کو ’’سردار‘‘ کہنے میں کیا تکلیف ہے؟ اس واقعے پر کسی تبصرے کی ضرورت نہیں اس سے آپ مستقبل کی روشنی صاف دیکھ سکتے ہیں اور یہ بھی اندازہ لگا سکتے ہیں کہ 1951ء میں جب بھارت نے زرعی اصلاحات نافذ کرکے سرداریاں جاگیرداریاں اور نوابیاں ختم کر دی تھیں تو کون سی ’’مصلحت‘‘ تھی جس کے پیش نظر پاکستان میں ایسا نہ ہو سکا۔ اس سے آپ یہ اندازہ بھی بخوبی لگا سکتے ہیں کہ ہماری سیاسی پارٹیوں پر کس ذہن (MIND SET) کے رہنما مسلط ہیں۔ آپ کو اس سوال کا جواب بھی‘ اس واقعے سے مل جائے گا کہ یہ جو خاندانی وراثتیں نام نہاد سیاسی پارٹیوں پر قابض ہیں تو اس کی اصل وجہ کیا ہے۔ جو لوگ اپنی سرداری کو ایک لمحہ کیلئے بھی فراموش نہیں کر سکتے انہیں پارٹی پر کسی خاندان کی سرداری قبول کرنے میں کیا ہچکچاہٹ ہو سکتی ہے! ظاہر ہے جس دن پارٹیوں کے اندر حقیقی جمہوریت آگئی تو جنوبی پنجاب ہو یا سندھ یا بلوچستان‘ سرداریاں بھی انٹا غفیل ہو جائیں گی!

جاگیرداری کی نفسیات میں دو باتیں اہم ہیں ایک یہ کہ جب دو فریقوں میں جھگڑا ہو تو جاگیردار یہ نہیں دیکھتا کہ غلطی کس کی ہے۔ وہ صرف یہ دیکھتا ہے کہ اس نے کس کی حمایت کرنی ہے۔ اگر اس نے اس فریق کی حمایت کا فیصلہ کر لیا جو غلطی پر ہے تو کوئی دلیل اسے اس فیصلے سے نہیں ہٹا سکتی دوسری یہ کہ جیسے ہی ہوا کا رخ تبدیل ہوتا ہے‘ جاگیردار بھی اپنا رخ بدل لیتا ہے۔ رنجیت سنگھ کا دور آیا تو جاگیردار اس کے ہم رکاب ہو گئے۔ پھر برطانوی حکمران آئے تو انہیں وفاداریاں بدلنے میں دیر نہ لگی۔ جب انہوں نے دیکھا کہ پاکستان کا قیام ناگزیر ہے تو تقسیم سے پہلے مسلم لیگ میں شمولیت اختیار کر لی۔ پھر ری پبلکن پارٹی میں چلے گئے۔ ایوب خان بادشاہ بنا تو اس کی بنائی ہوئی کونسل لیگ میں جوق در جوق گئے۔ جنرل مشرف نے قاف لیگ کا ڈول ڈالا تو لغاری تھے یا جمالی‘ سب کوچہ رقیب میں سر کے بل گئے!

تو پھر کیا ہماری امیدوں کا مرکز مڈل کلاس کو ہونا چاہئے؟ اگر جاگیردار اور سردار مرغان باد نما ہیں تو کیا مڈل کلاس میرٹ پر فیصلے کرتی ہے؟ اور کیا استقامت مڈل کلاس کا طرہ امتیاز ہے؟ افسوس صد افسوس! ایسا نہیں۔ مڈل کلاس پر نوحہ خوانی کرنے کیلئے کئی نام لئے جا سکتے ہیں۔ ایک صاحب نے تو مڈل کلاس کے ساتھ ساتھ ’’دانش ور‘‘ کلاس کا بھی پول کھول دیا ہے۔ اب یہ کوئی نہیں کہے گا دانش ور اور لکھاری ہوا کا رخ دیکھ کر وفاداریاں نہیں تبدیل کرتے۔ جنرل مشرف تخت نشین ہوئے تو بہت سے دوسرے مہاجر پر ندوں کی طرح مڈل کلاس کے بہت سے نمائندوں نے بھی نون لیگ کو خیرباد کہا اور مشرف کی کشتی میں سوار ہو گئے اور اب جب جنرل مشرف امتداد زمانہ کی نذر ہو گئے ہیں تو ان حضرات نے بھی تخت و تاج سے محروم بادشاہ کو خدا حافظ کہے بغیر چھوڑ دیا ہے! لیکن ایک شخص ایسا بھی ہے جو زبان حال سے کہہ رہا ہے…؎

شکستہ پا راہ میں کھڑا ہوں‘ گئے دنوں کو بھلا رہا ہوں

جوقافلہ میرا ہم سفر تھا مثال گردسفر گیاوہ

ڈاکٹر شیر افگن ان سب سیاسی مسافروں سے مختلف ثابت ہوئے وہ آج بھی جنرل مشرف کے ہم نوا ہیں‘ کھل کر اس کا ذکر کرتے ہیں‘ برملا اس کا نام لیتے ہیں اور کسی احساس کمتری کا شکار ہوئے بغیر کسی ندامت‘ شرمندگی یا پشیمانی کو نزدیک لائے بغیر آج بھی اس کا دم بھرتے ہیں۔ انصاف کا تقاضا ہے کہ ڈاکٹر شیر افگن کی اس استقامت کی تعریف کی جائے۔ وہ چاہتے تو قاف لیگ کے دوسرے رہنماؤں کی طرح جنرل مشرف کے احسانات بھول جاتے۔ لیکن وہ ڈٹے ہوئے ہیں۔ انکی استقامت کا تازہ واقعہ یہ ہے کہ قاف لیگ کے اجلاس میں انہوں نے سوال اٹھایا کہ جنرل مشرف سے فائدہ اٹھانے والے آج اس کا نام کیوں نہیں لے رہے؟ شاید مشاہد حسین صاحب نے انہیں ٹوکا ہو‘ اسی لئے ڈاکٹر شیر افگن نے (مبینہ طور پر) کہا ہے کہ شاہ صاحب نے انہیں دھکے دلوائے ہیں اور یہ کہ انہوں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے کہ سید مشاہد حسین مشرف کے جوتے سیدھے کیا کرتے تھے۔ یوں لگتا ہے کہ ڈاکٹر شیر افگن اور مشاہد حسین کی یہ باہمی ’’محبت‘‘ قدیم زمانوں سے ہے۔ جنرل مشرف کے زمانے میں سینٹ کے اجلاس میں بھی یہ ’’محبت‘‘ گاہے گاہے ظاہر ہو جایا کرتی تھی…ع

پا بدست دگری‘ دست بدست دگری

ایک بار جب مشاہد حسین نے دعویٰ کیا کہ نیب کے پاس ان کیخلاف کچھ نہیں تو ڈاکٹر شیر افگن خم ٹھونک کر کھڑے ہو گئے تھے اور جوابی دعویٰ کیا تھا کہ مشاہد حسین کیخلاف نیب کی باقاعدہ تحقیقات موجود ہیں۔ اس پر کچھ دیگر اصحاب نے ڈاکٹر شیر افگن سے اختلاف کیا تھا اور ان اختلافات کرنے والوں میں اسفند یار ولی اور رضا ربانی بھی تھے۔ پلاسٹک کے وزیراعظم شوکت عزیز جب میانوالی میں ایک آبی منصوبے کا افتتاح کرنے گئے تو شیر افگن نے جو شوکت عزیز کی کابینہ میں وزیر تھے۔ وزیراعظم کی تقریب کا ڈنکے کی چوٹ پر بائیکاٹ کیا۔ پلاسٹک کے وزیراعظم اس ’’عزت افزائی‘‘ کو پی گئے۔ سمجھ دار آدمی تھے۔ جانتے تھے کہ نوکری لگی ہوئی ہے۔ اور یہ کہ ڈاکٹر شیر افگن جنرل کے بہت قریب ہیں۔ شور مچانے سے یا ناراض ہونے سے کچھ حاصل نہ ہو گا۔ پلاسٹک کے وزیراعظم کتنے عظیم مدبر اور جہاں بانی کے اصولوں میں رچے بسے تھے‘ اس کا اندازہ اس شرمناک حقیقت سے لگائیے کہ ان کے وزیر قانون کے صاحبزادے نے والد کی موجودگی میں کراچی ائر پورٹ پر ایک معزز مسافر کو بغیر کسی قصور کے مار مار کر لہولہان کر دیا تو وزیراعظم کے ماتھے پر شکن آئی نہ کان پر جوں رینگی۔ وزارت عظمیٰ سے فارغ ہوئے تو کروڑوں روپے کے سرکاری تحائف جہاز میں لادے اور اپنے اصل وطن کو لوٹ گئے۔ واہ رے مڈل کلاس کی اصول پسندی اور اعلیٰ تعلیم یافتہ لوگوں کی دیانت داری! جاگیرداروں سے کیا شکوہ کیا جائے اور اعلیٰ طبقات کی کس منہ سے مذمت کی جائے!

بلوچ سردار نے کہا تھا کہ جب ہتھیلی پر بال اگ آئیں گے اور جب کوا انڈوں کے بجائے براہ راست بچے دینے لگے گا تو میں بھی انتقام لینا چھوڑ دوں گا۔ جنرل مشرف کا دوبارہ برسراقتدار آنا ایسا ہی ہے جیسے ہتھیلی پر بال اگ آئیں یا کوے بچے جننے لگیں‘ اس کے باوجود ڈاکٹر شیر افگن کا مشرف کے ساتھ مکمل اور غیر مشروط وفادار رہنا قابل تحسین ہے۔ لگتا ہے کہ ظفر اقبال نے یہ شعر ڈاکٹر شیر افگن ہی کیلئے کہا ہے…؎

جھوٹ بولا ہے ظفر تو اس پہ قائم بھی رہو

آدمی کو صاحب کردار ہونا چاہئے

Saturday, February 20, 2010

گوشت کے مزید ٹکڑے

وینس کے تاجر انتونیو نے یہودی ساہوکار سے قرض لیا تھا، اس یہودی ساہوکار کا نام شائی لاک تھا۔ شائی لاک نے معاہدے میں یہ شق لکھوائی تھی کہ اگر رقم وقت پر واپس نہ کی گئی تو شائی لاک انتونیو کے جسم سے ایک پونڈ (تقریباً آدھا کلو) گوشت کاٹ لے گا اور جسم کے جس حصے سے بھی چائے گا کاٹ سکے گا!

وینس کے تاجر کی یہ کہانی شیکسپیئر نے چار سو سال سے زیادہ عرصہ ہوا لکھی تھی۔ ان چار صدیوں میں یہ ضرب المثل بن گئی ۔ مظلوم کو انتونیو اور ظالم کو شائی لاک کہا جاتا ہے، لیکن آج ہم آپ کی ملاقات جس مظلوم سے کرا رہے ہیں اس کے مقابلے میں انتونیو پر تو کوئی ظلم ہوا ہی نہیں تھا اور ہم آپ کی ملاقات جس ظالم سے کرا رہے ہیں اس کے مقابلے میں شائی لاک آپ کو رحم و کرم کا پُتلا لگے گا۔ انتونیو کے جسم سے صرف ایک شائی لاک گوشت کاٹنے کے درپے تھا، ہم جس مظلوم کو آپ کی عدالت میں پیش کر رہے ہیں اس کے پیچھے شائی لاک نہیں، کہ وہ تو پھر بھی ایک انسان تھا درندوں اور وحشیوں کا ایک غول چلاتا، دھاڑتا، چلا آ رہا ہے! یہ مظلوم پاکستانی صارف ہے۔!

اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ پاکستانی عوام کے پیچھے صرف دولت کی پرستش کرنے والے سیاست دان، بددیانت بیورو کریٹ اور لالچی مولوی پڑے ہوئے ہیں تو آپ غلطی پر ہیں۔ اگر آپ کا خیال یہ ہے کہ صرف ناجائز نفع کمانے والے آتش خور تاجر پاکستانی صارف کا گوشت کاٹنے کے درپے ہیں تو آپ حقائق سے بے خبر ہیں اور آپ کی لاعلمی قابلِ رحم تو ہے، قابل معافی نہیں۔

پاکستانی صارفین کے جسموں سے اپنی پسند کا گوشت کاٹنے میں اس وقت موبائل ٹیلی فون کمپنیاں سرِ فہرست ہیں یہ موبائل ٹیلی فون کمپنیاں وہ منہ زور گھوڑے ہیں جو بے لگام سرپٹ دوڑتے چلے جا رہے ہیں اور راستے میں آنے والے ہر ذی روح کو کچل رہے ہیں۔ یہ موبائل ٹیلی فون کمپنیاں وہ مست ہاتھی ہیں جو اپنی سونڈیں فضا میں لہرائے بجلی کی رفتار سے بھاگتے آ رہے ہیں اور انسان تو انسان، چوپائے بھی الامان و الحفیظ کہہ کر چھپتے پھر رہے ہیں!

آپ کو یاد ہو گا کہ موبائل ٹیلی فون کا رواج اس ملک میں 2000ء سے کچھ عرصہ پہلے زیادہ ہونا شروع ہوا۔ اس وقت ملک میں ایک دو کمپنیاں ہی تھیں ۔ پاکستانی صارف کے ساتھ اس زمانے میں جو سلوک ہوا دنیا میں کسی کے ساتھ نہ ہوا ہو گا۔ ٹیلی فون کال کرنے کی قیمت تو ادا کرنا ہی تھی، ظلم یہ تھا کہ کال وصول کرنے کے بھی دام تھے اور بھاری دام تھے۔ کروڑوں اربوں روپیہ ’’کمایا‘‘ گیا اور یہ کمائی کچھ تو کاروبار کرنے والوں کے حصے میں آئی اور باقی کمپنی کے اصل ملک کو بھیجی جاتی رہی۔ کال وصول کرنے کی قیمت اتنی زیادہ تھی کہ لوگ اپنے پیاروں سے اپنا ٹیلی فون نمبر چھپاتے پھرتے تھے اور کال کرنے والا زہر لگتا تھا خدا خدا کر کے بربریت کا یہ دور ختم ہوا اور آنے والی کال جیسا کہ دنیا کے تمام مہذب ملکوں میں ہوتا ہے۔ مفت ملنے لگی یا کم از کم بظاہر مفت ملنے لگی پھر موبائل کمپنیوں کی بھرمار ہو گئی ایک کے بعد دوسری، دوسری کے بعد تیسری چین سے لے کر دبئی سے ہوتے ہوئے ناروے تک سب نے یہاں کاروبار سنبھال لیا۔ اٹھارہ کروڑ کی آبادی میں ہر شخص موبائل فون چاہتا ہے اور کچھ ’’عقل مند‘‘ تو ایسے ہیں کہ کئی کئی موبائل فون اور کئی کئی کنکشن رکھنے کے شوقین ہیں (ان ’’عقل مندوں‘‘ کے بارے میں خصوصی کالم کچھ دنوں بعد!) ان پڑھ نو دولتیوں نے چھوٹے بچوں کو بھی فون لے کر دینے ہیں۔ نتیجہ یہ کہ یہ ساری کمپنیاں اربوں روپے کما رہی ہیں لیکن المناک بات یہ ہے کہ مزید کمانے کی ہوس ختم نہیں ہو رہی۔ اس ’’مزید‘‘ چکر میں یہ اپنے صارفین کو نئی نئی اذیتوں سے دوچار کر رہی ہیں اور اذیت دہی کے اس عمل میں سب متحد اور متفق ہیں۔ یہ سب موبائل کمپنیاں صارفین کے جسموں سے زیادہ سے زیادہ گوشت کاٹنا چاہتی ہیں اور اسی ظلم کے خلاف ہم ان سطور میں ماتم کرنا چاہتے ہیں۔

آپ بیمار ہیں ڈاکٹر نے مکمل آرام کا مشورہ دیا ہے، آپ کو رات کے وقت یوں بھی نیند نہیں آ رہی ہزار دقت سے آنکھ لگی ہے اتنے میں آپ کا موبائل فون پیغام آنے کی گھنٹی دیتا ہے۔ آپ کی آنکھ کھل جاتی ہے دل دھک سے رہ جاتا ہے۔ یہ پیغام آپ کی بیمار والدہ کی طرف سے یا امریکہ میں رہنے والے بھائی کی طرف سے تو نہیں؟ آپ گھبرا کر اٹھ بیٹھتے ہیں اور پیغام پڑھتے ہیں۔ پیغام یہ ہے:

پیارے صارفین! کھانا پکانے کی ترکیبیں، کہانیاں اور لطیفے سننے کے لئے 1310 ڈائل کیجیئے اور فروری کی فلاں تاریخ سے فلاں تاریخ تک ہر منٹ پر ایک منٹ مفت حاصل کیجئے‘‘ آپ سر پیٹ کر رہ جاتے ہیں۔ نیند اڑ جاتی ہے آپ حیران ہیں کہ رات ایک بجے یہ پیغام بھیجنے میں کیا حکمت ہے؟ آپ اپنے موبائل فون کی کمپنی کی ہیلت لائن (Help Line) پر فون کرتے ہیں۔ آدھا گھنٹہ آپ کو انتظار کرانے کے بعد ایک صاحب یا صاحبہ آپ کی بات سنتی ہیں۔ آپ کی شکایت نوٹ کرتی ہیں اور وعدہ کرتی ہیں کہ آئندہ ایسا نہیں ہو گا۔ آپ دوبارہ سونے کے جتن کرتے ہیں صبح چار بجے کے قریب کروٹیں بدل بدل کر آپ کی آنکھ لگتی ہے کہ پھر پیغام کی گھنٹی بجتی ہے اب کے پیغام یہ ہے۔

’’پیارے صارفین! آپ فلاں نمبر پر فون کر کے دوست بنا سکتے ہیں اور ان نئے دوستوں سے بات چیت کر سکتے ہیں اگر آپ نئے دوست بنائیں تو فلاں تاریخ سے فلاں تاریخ تک ہر دو منٹ کے بعد مفت کے دو منٹ مل سکتے ہیں‘‘

آپ پھر سر پیٹتے ہیں۔ کیا بہنوں، بیٹیوں، بیویوں، ماؤں کو نئے دوست بنانے کے پیغام بھیجنا ہمارے کلچر اور ہماری اخلاقیات میں مستحسن ہے؟ آپ دوبارہ ہیلپ لائن پر جاتے ہیں اور کہتے ہیں کہ مجھے ان صاحب یا صاحبہ سے بات کرنی ہے جن سے چند گھنٹے پہلے شکایت کی تھی لیکن اب کے جو صاحب یا صاحبہ آپ سے محوِ گفتگو ہیں وہ رعونت سے بتائی ہیں کہ آپ ان سے بات نہیں کر سکتے!

دوسرے دن آپ کو ایک اور پیغام ملتا ہے۔

’’معزز صارفین! اگر آپ نے اپنی کمپنی کے لئے اشتہار دینا ہے یا ٹریڈ مارک حاصل کرنا ہے یا ٹیکس کے سلسلے میں کوئی مسئلہ حل کرنا ہے تو مندرجہ ذیل نمبروں پر رابطہ کیجئے‘‘

اس کے بعد دو تین نمبر درج ہیں۔ آپ حیران ہوتے ہیں کہ آپ کی کمپنی ہے نہ کاروبار، آپ کو یہ اشتہار کیوں بھیجا گیا ہے۔ ابھی آپ حیران ہونے کے دردناک عمل سے گزر ہی رہے ہیں کہ تین چار تابڑ توڑ اشتہار مزید وصول ہوتے ہیں۔ کوئی آپ کو کہہ رہا ہے کہ اپنی ویب سائٹ ہم سے بنوائیں۔ کوئی سبز باغ دکھاتا ہے کہ اپنی این جی او کا کام ہم سے کرائیں، کوئی وعدہ کرتا ہے کہ اگر یہ کریں گے تو قرعہ اندازی میں آپ کی قسمت کا ستارہ چمک اٹھے گا اور کوئی آپ کو متنبہ کرتا ہے کہ اگر فلاں فائدہ اٹھانا ہے تو فلاں کام فلاں سے نہ کرائیں بلکہ ہم سے کرائیں۔

یوں لگتا ہے کہ اگر موبائل ٹیلی فون کمپنیوں کی ہوس زر اسی طرح بڑھتی رہی تو بہت جلد وہ وقت بھی آئے گا کہ دیواروں پر لکھے ہوئے غیر اخلاقی جنسی اشتہار بھی ایس ایم ایس کے ذریعے چادر اور چار دیواری کی حدیں پھلانگ لیں گے۔ ہاتھ دیکھنے والے، طوطے سے فال نکالنے والے، زائچے بنانے والے، تعویذ فروخت کرنے والے، کپڑے کو بالشت سے ماپ کر جادو کا اثر ’’زائل‘‘ کرنے والے اور کُشتوں سے شرطیہ جوانی واپس لانے والے سب آپ کے موبائل فون پر اپنے اپنے کمالات کے اعلان کریں گے جن کو کبھی آپ کی بیٹیاں پڑھیں گی اور کبھی ان سے آپ کے پوتے اور نواسے اپنے علم میں ’’اضافہ‘‘ کریں گے۔

پاکستانی عوام کو یہ جاننے کاحق ہے کہ موبائل ٹیلی فون کمپنیاں ایک سال میں کتنا منافع کما رہی ہیں اور ہر سال کتنے کروڑ اور کتنے ارب روپے ان کمپنیوں کے صدر دفاتر (Head offices) کو بھیجے جاتے ہیں۔ معصوم پاکستانی صارفین کو تو یہ بھی نہیں معلوم کہ ترقی یافتہ ملکوں میں کسی موبائل ٹیلی فون کمپنی کی مجال نہیں کہ آدھی رات کو اشتہار بھیج کر لوگوں کی نیند خراب کرے۔ اگر وہ ایسا کرے تو عدالتیں مار مار کر کمپنی کا بھرکس نکال دیں۔ نہ ہی دوسرے ملکوں میں اشتہاری کمپنیاں صارفین کو اس طرح مشق ستم بناتی ہیں جس طرح پاکستان میں انہیں زِچ کیا جا رہا ہے۔ پاکستانی صارفین کے جسموں سے ہر کوئی گوشت کاٹ رہا ہے۔ دنیا بھر میں کریڈٹ کارڈ مفت ملتے ہیں یہاں کریڈٹ کارڈ کی سالانہ ’’فیسیں‘‘ لی جاتی رہیں! مہذب ملکوں میں رات کو ہوائی اڈوں پرجہاز اترتے ہیں نہ روانہ ہوتے ہیں تاکہ اردگرد کی آبادیوں میں لوگوں کی نیند میں خلل نہ پڑے۔ پاکستان میں تمام غیر ملکی ہوائی کمپنیوں کے جہاز آدھی رات کو یا سحری سے پہلے پہنچتے ہیں یا روانہ ہوتے ہیں۔یہی حال موبائل ٹیلی فون کمپنیوں کا ہے۔ آخر یہ موبائل فون کمپنیاں کتنی دولت مزید اکٹھی کرنا چاہتی ہیں اور صارفین کے جسموں سے گوشت کے مزید کتنے ٹکڑے کاٹنا چاہتی ہیں؟

Wednesday, February 17, 2010

Of Small And Big Funerals

I had no intention of visiting Zainab Market and roaming about in Elphinstone (now Zaibun nisa) street at that hour of the evening as the driver was to be set free after he would drop me back. I would come later on foot and spend, as usual, hours in that part of the city. This was my standing habitué for last many decades whenever I would travel to Karachi. But when I did not see the age-old sign board of Almaas Book Shop in front of Zainab Market, I got panicky and asked the driver to sideline the vehicle. A panwaala was handling his customers at the closed door of the shop. I, while sitting in the car, called him. He moved towards my open glass window after a considerable period of time elapsed.

“There used to be a book shop here. Has it been closed?” “yes. It has been sold out”.

“and where is the old shopkeeper?

“I do not know.”

The doomed shopkeeper was an elderly Persian speaking Parsi whom I used to visit whenever I came to Karachi. Besides practicing my rusty Persian, I would graze books of classical and modern Persian poetry fabulously produced by Iranians. He would proudly show me his latest imports. At times, when my budget stuck out, I would buy some of these books which later on, would further increase my wife’s impuissance on ever increasing number of books in our rented accommodation.

Death of this bookshop is not the first catastrophe for book lovers. When I started my civil service career from Karachi in early seventies, recalling painfully, there were a number of bookshops in Elphinstone Street. Entering from Regel, one would come across “kitab Mahal” on the right side. It met its demise long ago. Last was the American book company which gave-up the ghost some years back. Now only two shops were left: Thomas and Thomas at one end of Elphinstone Street (Regel Side) and Almas Books at the other end (opposite Zainab Market).Let us see when the few squares of feet providing sanctuary to Thomas and Thomas give way to some more lucrative business.

A journalist has bewailed that recent funeral of a very famous columnist was attended by only a couple of hundred mourners at Lahore whereas that of Tipu Trukkanwala (Truck man) on the same day was attended by thousands. Tipu was a notorious underworld star of Lahore, equally popular among police and other people of that ilk. The truck drivers association called for a strike also to commemorate his death. In a society where there are no libraries and the book shops are vanishing fast, no wonder that hoods are more respected than scholars. A Ph.D professor is looked down upon as a“master” and a Patwaari or SHO is venerated in a far higher esteem. A magistrate summons principal of a college and assigns him ‘duty’ on some polling station. Majority of elected “Cream” of the society are not even graduate. In an era where more than half of cabinet members in countries like Singapore, even India, are Ph.Ds most of our ministers paint a dismal picture when speak or write, if ever they write !

The nation’s aversion to books and writers has brought the country where it finds itself today. How many bookshops are there in FATA and Swat? For that matter how many universities and colleges have been established in these areas during last sixty two years? What about Bugti and Mari areas and other parts of Baluchistan? Is there any university in Qalat, Zhob, Gwadar, Khuzdar or Chaman? Food streets are thriving .Bookshops are being shut down. Pak Tea house has been replaced by a tire shop. A multinational fast food outlet received thirty five thousand customers on its first day at Lahore. Open a branch of Borders, Waterstone’s or Barnes & Noble and see the knock over ! It is said that during a state visit to Kualalumpur, the then Prime Minister of Pakistan headed from airport straight to a fast food shop. Thanks to our stars, our politicians, whether elected or waiting for their turn, all are book lovers!

( This article was published in Daily The  News   on   04 Feb ,2010 with the  title, "Bookshops Dying" )

Tuesday, February 16, 2010

کیا پیپلز پارٹی میں کوئی رجلِ رشید نہیں ؟

ہجوم اُس گھر کی طرف بڑھ رہا تھا!

بستی کے نام نہاد شرفا‘ سردار اور چوہدری بھی ہجوم میں تھے اور غنڈے‘ لقندرے اور تلنگے بھی تھے۔ یہ کس طرح ممکن تھا کہ بستی میں خوبصورت نوجوان آئیں اور بچ کر نکل جائیں‘ خواہ وہ مہمان ہی کیوں نہ ہوں! ہجوم نے گھر پر ہلہ بول دیا۔ میزبان نے انہیں سمجھایا‘ ڈانٹا‘ منت سماجت کی اور آخری چارۂ کار کے طور پر پوچھا کہ ’’کیا تم میں کوئی رجلِ رشید‘ کوئی بھلے مانس‘ کوئی سمجھانے والا نہیں؟‘‘

یہ میزبان ‘ جس کے گھر میں مہمان آئے تھے‘ خدا کا پیغمبر تھا۔ اگر اُس ہجوم میں‘ جس میں سردار بھی تھے اور عام گامے ماجھے بھی‘ کوئی بھلے مانس ہوتا‘ کوئی رجلِ رشید ہوتا‘ تو اس قوم کا انجام تباہی نہ ہوتا۔

سوال یہ ہے کہ کیا پوری پیپلز پارٹی میں کوئی رجلِ رشید نہیں جو زرداری صاحب کو اور اُن کے پسند کردہ وزیراعظم کو سمجھائے کہ جس راستے پر وہ چل رہے ہیں‘ تباہی کا راستہ ہے۔

پیپلز پارٹی کے بھلے مانسوں کا یہ حال ہے کہ پارٹی کی سیکرٹری اطلاعات کو جس بات پر اعتراض ہے وہ یہ ہے کہ عدالتیں راتوں کو نہیں لگتیں اور حکومت کے وزیر اطلاعات فرماتے ہیں کہ ’’ہم نے آئین کے مطابق فیصلہ کیا ہے۔‘‘

پارٹی کی سیکرٹری اطلاعات اور حکومت کے وزیر اطلاعات جو کچھ بھی نہیں‘ اُن سے اسی کی توقع ہے۔ اس میں تعجب کی کوئی بات نہیں۔ پریشانی کی بات اور ہے!

پیپلز پارٹی اس وقت بلاشبہ ملک کی سب سے بڑی سیاسی جماعت ہے جسے چاروں صوبوں کی زنجیر کہا جاتا ہے۔ کراچی سے لے کر گلگت تک اور واہگہ سے لے کر پشاور اور کوئٹہ تک ہر شہر اور ہر قصبے میں پیپلز پارٹی کے رہنما اور کارکن موجود ہیں۔ پریشانی کی بات یہ ہے کہ ان لاکھوں کارکنوں اور رہنماؤں میں کوئی شخص ایسا نہیں جو پارٹی کے شریک چیئرمین کو سمجھائے‘ سیدھا راستہ دکھائے‘ تنبیہہ کرے یا منت سماجت کرے!

آپ تھوڑی دیر کیلئے غور کریں۔ کیا یہ بات پریشان نہیں کن نہیں؟ صدر زرداری نے چیف جسٹس کی تجاویز یا سفارشات مکمل طور پر پس پُشت ڈال کر‘ اپنی مرضی کے ججوں کی تعیناتی کی اور سپریم کورٹ نے چند گھنٹوں کے اندر اندر صدر کے احکام کو معطل کر دیا۔

اتنی بڑی غلطی جو اندھوں کو بھی نظر آ رہی ہے اور جس سے بچے بھی آشنا ہیں‘ کتنی عجیب بات ہے کہ پیپلز پارٹی کے طول و عرض میں کسی کو نظر نہیں آئی نہ آ رہی ہے! آخر اس کا سبب کیا ہے؟

یہ تو ممکن نہیں کہ پارٹی میں ذہین لوگ نہ ہوں۔ بلاشبہ پارٹی میں عالی دماغ حضرات موجود ہیں۔ بڑے بڑے قانون دان‘ بڑے بڑے سمجھ دار‘ سوچنے سمجھنے والے‘ نفع نقصان کا ٹھیک ٹھیک اندازہ کر لینے والے اور دن میں روشنی اور رات کو اندھیرے کا احساس کر لینے والے لوگ موجود ہیں۔

افسوس! تشخیص کوئی نہیں کر رہا اور اگر کوئی تشخیص کر بھی رہا ہے تو مصلحتوں نے زبانوں پر مُہریں لگائی ہوئی ہیں۔ مفادات کے کپڑے منہ میں ٹھنسے ہوئے ہیں۔ جو جانتا ہے وہ تو جانتا ہے‘ جو نہیں جانتا وہ جان لے اور سمجھ لے کہ جن سیاسی پارٹیوں کے اندر جمہوریت نہیں ہوتی اُن میں پارٹی کے سربراہ سے اختلافِ رائے کی جرأت کوئی نہیں کر سکتا! یہ ہے وہ تشخیص اس بیماری کی جس بیماری میں پوری پارٹی میں کوئی رجلِ رشید نہیں میسر آتا!

اگر آپ اس تشخیص کو تسلیم کرنے میں تامل کر رہے ہیں تو ازراہِ کرم اس بات کو ایک زاویے سے سمجھنے کی کوشش کریں۔ جب ملک میں ڈکٹیٹر کی حکومت تھی تو کیا اُسکے حواری اُس سے اختلاف کرنے کی جرأت کرتے تھے؟ نہیں! ہرگز نہیں!

جنرل مشرف کی مثال دیکھ لیں اُس نے حماقت پر حماقت کی۔ چیف جسٹس کو قید کر دیا‘ پھرملک میں ازسرنو مارشل لا لگا دیا لیکن کیا کابینہ میں سے یا قاف لیگ میں سے کوئی اتنی جرأت کر سکا کہ غلط کو غلط کہتا! آج مشاہد حسین آصف زرداری کو ’’سیاسی خودکش بمبار‘‘ کا خطاب دے رہے ہیں اور وزیراعظم سے اپیل کر رہے ہیں کہ صدر کا جاری کردہ حکم نامہ واپس لے لیں لیکن کل جنرل مشرف نے جب یہی کچھ کیا تھا بلکہ اس سے کئی گنا زیادہ تو یہ منقار زیرِ پر تھے۔

کل انہوں نے وزیراعظم شوکت عزیز سے اپیل نہیں کی تھی کہ جناب وزیراعظم! صدر مشرف کا جاری کردہ حکم نامہ واپس لے لیجئے۔

ہمارا مطلب … حاشا وکلا … یہ نہیں کہ جناب مشاہد حسین کی تنقید ناروا ہے۔ انہوں نے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کو جو کہا ہے کہ وہ صدر کا جاری کردہ حکم نامہ واپس لے لیں تو ہم اسکی سو فیصد تائید کرتے ہیں۔

ہم تو اس مثال سے اپنا یہ نکتہ واضح کرنا چاہتے ہیں کہ آمریت ملک میں ہو یا پارٹی میں‘ اختلاف رائے کی جرأت کوئی نہیں کریگا۔

یہی حال اعجازالحق صاحب کا ہے اب وہ طویل و عریض مضامین اخبارات میں چھپوا رہے ہیں اور لکھ رہے ہیں کہ …

’’2007ء میں موجودہ چیف جسٹس کی اپنے عہدے سے معطلی یا برخواستگی انتہائی غیر قانونی اور قطعی غیر آئینی تھی‘‘ ۔

دیکھا آپ نے؟ جناب اعجاز الحق برملا اور ڈھکے چھپے الفاظ کے بغیر صاف صاف فرما رہے ہیں کہ 2007ء کا اقدام ’’انتہائی غیر قانونی اور قطعی غیر آئینی‘‘ تھا لیکن 2007ء میں جب یہ سب کچھ ہو رہا تھا تو موصوف ’’قطعی‘‘ خاموش رہے اس لئے کہ بولتے تو ڈکٹیٹر انہیں کابینہ سے یوں نکال پھینکتا جیسے دودھ سے مکھی! بالکل یہی عالم ہماری سیاسی پارٹیوں کا ہے۔

آج اگر پیپلز پارٹی کا کوئی عہدیدار یا وزیر برملا کہے کہ صدر زرداری کا اقدام غیر قانونی ہے‘ تو پارٹی کا آمر سربراہ اُسے پارٹی سے نکال باہر کریگا اور صرف پیپلز پارٹی ہی کو کیوں مطعون کیا جائے‘ وہ ساری سیاسی جماعتیں جو آمریت کی بنیاد پر قائم ہیں‘ اپنے کسی عہدیدار‘ کسی کارکن کا اختلاف رائے برداشت نہیں کر سکتیں! نون لیگ میں رہنا ہے تو میاں نواز شریف کی ہر بات پر آمنّا و صدّقنا کہنا ہو گا۔ قاف لیگ میں بسیرا کرنا ہے تو چوہدریوں سے اتفاق کرنا ہو گا وگرنہ ہم خیال بن کر الگ ہو جائیں‘ ایم کیو ایم کے اندر رہ کر سیاست کرنی ہے تو جناب الطاف حسین کو قائد بھی ماننا پڑیگا اور انکے ہر ارشاد کو تسلیم بھی کرنا ہو گا۔

اے این پی کی ویگن پر سواری کرنی ہے تو جناب اسفند یار ولی کے ہر حکم پر سرِ تسلیم خم کرنا ہو گا خواہ صوبے کا وزیر اعلیٰ اُن کا رشتہ دار ہو یا کراچی میں پارٹی کا سربراہ اُن کا قریبی عزیز ہو۔ جے یو آئی (فضل الرحمن گروپ) کے کندھے پر سوار ہو کر وزیر بننا ہے تو عالم دین ہونا ضروری نہیں لیکن مولانا صاحب کے ہر ارشاد کو ماننا ازحد ضروری ہے۔ پارٹیوں کے یہ سارے سربراہ بادشاہ ہیں اور بادشاہوں کے بارے میں سعدی ہدایات دے گئے ہیں کہ …؎

اگر شہ روز را گوید شب است این

بباید گفت اینک ماہ و پروین

اگر بادشاہ دن کو رات کہتا ہے تو آپ نہ صرف یہ کہ دن کو رات کہیں بلکہ یہ بھی کہیں کہ حضور! ستارے اور چاند بھی آسمان پر چمک رہے ہیں!

آج اگر صدر زرداری کو معلوم ہوتا کہ کل پیپلز پارٹی کے اندر ۔۔ نیا سربراہ منتخب کرنے کیلئے الیکشن ہو گا تو وہ یقیناً ایسے اقدامات کا ارتکاب نہ کرتے اس لئے کہ ایسا کرنے سے وہ پارٹی کے اندر ہونے والے انتخابات میں شکست کھا جاتے۔ اگر پارٹی کے اندر انتخابات ہونے کا کوئی امکان نہیں اور سورج مغرب سے نکلنے تک بھٹو خاندان ہی پارٹی کی سربراہی پر فائز رہنا ہے تو چیئرمین ۔۔ یا شریک چیئرمین ۔۔ پارٹی کے اندر کسی کو رجلِ رشید کیوں بننے دے؟

Saturday, February 13, 2010

کچھ دیر آگرہ میں

آنکھیں چمک دار،ناک بلند، داڑھی خشخشی، مونچھیں بڑی، لباس وہی جو محمد شاہ رنگیلے کے زمانے میں دہلی میں رائج تھا۔ یعنی کھڑکی دار پگڑی، گاڑھے کا انگرکھا، نیچے کرتا، ایک بَر کا پاجامہ، انگلیوں میں فیروزے اور عقیق کی انگوٹھیاں۔

یہ حُلیہ اُس شخص کا ہے جس سے بڑا شاید ہی نظم کا کوئی شاعر گزرا ہو اور جو کچھ نظم کیا، عملی طور پر کرکے دکھایا۔ یہاں تک کہ ریچھ اور بندر نچائے، کبوتر اُڑائے، چوسر اور شطرنج کھیلی، آم، جامن کے ٹوکرے سر پراٹھائے، دال اور پاپڑ کی دکان لگائی، عید پر میلوں ٹھیلوں میں گئے۔ ہولی پر رنگ پھینکے، بسنت آئی تو پتنگ اُڑاتے۔ شبِ برات پر پٹاخے چھوڑے۔ یہ تھے نظیر اکبر آبادی جن کی نظموں میں آج تک برصغیر کی عوامی زندگی اُسی طرح تازہ ہے جیسے اڑھائی سو سال پہلے نظر آتی تھی۔ اٹھارھویں صدی عیسوی کا آگرہ ہے۔ وہ دیکھئے، نظیر اکبر آبادی ٹٹو پر سوار آرہے ہیں۔ ٹٹو ایسا سدھایا ہے کہ کسی نے سلام کیا تو خود ہی ٹھہر گیا۔ راہ چلتے لوگ نظموں کی فرمائش کر رہے ہیں۔ کنجڑا ملا تو کہہ رہا ہے کہ میاں ککڑی پر کچھ کہہ دو۔ فقیر ملا کہ کوئی قصہ کہہ دیجئے کہ اس کے ذریعے بھیک مانگ کھائوں۔ ایک بار کھانا کھا رہے تھے۔ بیسنی روٹی بھی تھی۔ اچار کو دل چاہا۔ بھولا رام پنساری کالڑ کا سبق پڑھنے کیلئے پاس بیٹھا تھا۔ اسے کہا جا، چاچا سے کہو میاں نے اچار منگایا ہے۔ وہ لے آیا۔ کھول کر دیکھا تو اچار کے مصالحے میں مرا ہوا چوہا لٹ پت پڑا تھا۔ کمال کی زُود گوئی تھی۔ فوراً طبیعت رواں ہوگئی اور ایسی نظم کہی جو اردو شاعری میں کبھی مر نہیں سکتی۔ ایک بند دیکھئے…

پھر گرم ہوا آن کے بازار چوہوں کا

ہم نے بھی کیا خوانچہ تیار چوہوں کا

سر پائوں کُچل کُوٹ کے دوچار چوہوں کا

کیا زور مزیدار ہے آچار چوہوں کا

زندگی کا شاید ہی کوئی شعبہ ہو جس کے بارے میں انہوں نے نظم نہ کہی ہو۔ حمد، نعت، اور حضرت علیؓ کے معجزے سے لے کر شبِ برات اور ہولی تک، ریچھ کے بچے سے لے کر گلہری اور اژدہے کے بچے تک، لطفِ شباب اور لذتِ وصال سے لے کر موت تک، عاشقوں کی بھنگ سے لے کر تربوز، آندھی، چپاتی، جوگن، مہادیو کے بیاہ، آٹے دال کی فلاسفی، برسات، جاڑے، کنجوسی، سخاوت، شطرنج کی بازی اور شبِ مہتاب تک۔ ہر موضوع پر انہوں نے لکھا اور لکھنے کا حق ادا کردیا۔

شیخ رشید پر کسی بدبخت نے قاتلانہ حملہ کیا تین افراد کی قیمتی زندگیاں ختم ہوگئیں، سیاسی افق پر آندھی اُٹھی اور دیکھتے دیکھتے سارے آسمان پر چھا گئی، نون لیگ، قاف لیگ، پیپلز پارٹی، پنجاب حکومت، مرکز، سب نے الزام اور جوابی الزامات کا طومار باندھ دیا۔ میں پریشان ہوگیا۔

کس کا یقین کیجئے، کس کا یقین نہ کیجئے

لائے ہیں بزمِ ناز سے یار خبر الگ الگ

میں نے فیصلہ کیا کہ نظیراکبر آبادی کے پاس جاتا ہوں۔ سو میں نے سفر کی تیاری کی۔ اسباب باندھا، نیک بخت بی بی نے پراٹھے لگا کر کپڑے میں باندھے۔ سامان کی پوٹلی میں نے لاٹھی کے سرے پر لٹکائی۔ پھر وقت کے گھوڑے پر زین ڈالی، گھوڑے کو پَر لگائے، زمانے کو رکاب بنایا۔ دو صدیوں کا لگام گھوڑے کے منہ میں ڈالا۔ جادو کا سرخ پٹکا کمر کے گِرد کَسا اور آگرہ جا پہنچا۔ وہی آگرہ جسے اکبر آباد کہتے ہیں۔ یہ 1795ء ہے۔ نظیر کی عمر ساٹھ سال ہے۔ میں بازاروں میں انہیں ڈھونڈنے لگا۔ بالآخر ایک دکاندار نے بتایا کہ نظیر کی ان دنوں طبیعت ٹھیک نہیں۔ تم محلہ تاج گنج جائو، وہاں سے …کا پتہ کرو۔ نظیر اپنے مکان میں ہوں گے۔ میں پوچھتا پوچھتا پہنچ گیا۔ کنڈی کھٹکھٹائی۔ امام بخش چھوکرے نے دروازہ کھولا۔ دیکھا تو دالان کے سامنے صحن میں نیم اور بیری کے درختوں کے درمیان بوریا اور بوریے پر کمبل بچھائے بیٹھے ہیں اور کھانا تناول کر رہے ہیں۔ مجھے ساتھ بٹھا لیا۔ میٹھے چاول، کھچڑی، لیموں کا اچار اور گلگلے تھے۔ اوپر سے آم اور شریفہ بھی کھایا اور کھلایا۔ پھر مجھ سے بات کی اور دو سو سال پیچھے کی طرف سفر کا سبب پوچھا۔ میں نے اُن کے ہاتھوں کو بوسہ دیا۔ گھٹنوں کو ہاتھ لگایا اور بتایا کہ پراگندہ خاطر ہوں۔ شہر کے قد آور سیاسی لیڈر پر گولیاں چلی ہیں۔ سیاسی پارٹیاں گتھم گتھا ہو رہی ہیں۔ آپ پیرَمغاں ہیں۔ حافظ شیرازی بھی پیرَمغاں کے پاس اپنی مشکل لے گیا تھا…؎

مشکل خویش برَ پیرِ مغاں بُردم دوش

کو بتائیدِ نظر حلِ معّما می کرد

نظیر ہنسے۔ کہنے لگے، جس نے بھی گولیاں چلائی ہیں اور جس نے بھی چلوائی ہیں اسے کچھ حاصل نہیں ہوا، خدانخواستہ شیخ رشید راستے سے ہٹ جاتے تو کیا ہوتا؟ ایک قیمتی جان ضائع ہوتی۔ صدمہ ہوتا، بچ گئے، اچھا ہوا، خدا شیخ صاحب کو عمرِ خضر عطا کرے اور ان کا سایہ اپنے عزیزوں پر دیر تک سلامت رکھے، رہے تم، اور تمہاری قوم اور تمہارا ملک اور تمہارے عوام۔ تو کسی سیاست دان کے مرنے، زندہ رہنے، کسی پارٹی کے ہارنے یا جیتنے کا تمہیں کیا فائدہ؟

کی وصل میں دلبر نے عنایات تو پھر کیا

یا ظلم سے دی ہجر کی آفات تو پھر کیا

غصّہ رہا یا پیار سے کی بات تو پھر کیا

گر عیش سے عشرت میں کٹی رات تو پھر کیا

اور غم میں بسر ہوگئی اوقات تو پھر کیا

نظیر اکبر آبادی نے حقے کا کش لگایا۔ میں اُن کے پائوں دبا رہا تھا۔ اور تھوڑی تھوڑی دیر کے بعد اُن کے ہاتھ چومتا تھا۔ اُن کے ماتھے پر خال تھا اور کانوں پر پٹے تھے۔ انہوں نے بات جاری رکھی۔

فرض کرو شیخ رشید جیت جاتے ہیں۔ تو وہ تو پہلے بھی کئی بار جیتے ہیں۔ تم لوگوں کو کیا فرق پڑا؟ وہ ضیا کے ساتھ تھے یا مشرف کے ساتھ۔ چوہدریوں کے ساتھ تھے یا اُس سے پہلے نوازشریف کے ساتھ، جس کے بھی ساتھ تھے، کبھی نہ بدلنے والی صورت حال (STATUS_QUO) ہی کے نمائندے رہے، اب جیت جائیں تو کیا اُن کی ذہنی سطح بدل جائے گی؟ کیا وہ زرعی اصلاحات کیلئے لڑیں گے؟ کیا وہ سرداری نظام ختم کرنے کیلئے جہاد کریں گے؟ کیا انہیں ادراک ہے کہ تمہارے ملک میں بیک وقت چار تعلیمی نظام چل رہے ہیں جو تمہیں ایک ہزار سال بھی ترقی نہیں کرنے دیں گے؟ کیا شیخ رشید وزارت کے بغیر زندہ رہ سکیں گے؟ اور کیا وزیر بن کر وہی لباس پہنا کریں گے جو اِن دنوں انتخابی مہم کے دوران پہنتے ہیں؟

اور فرض کرو شیخ رشید ہار جاتے ہیں اور ملک شکیل اعوان جیت جاتے ہیں۔ تو پھر کیا ہوگا؟

گر شاہ سر پہ رکھ کر افسر ہوا تو پھر کیا

اور بحرِ سلطنت کا گوہر ہوا تو پھر کیا

نوبت، نشاں، نقارہ در پر ہوا تو پھر کیا

ملک و مکاں خزانہ لشکر ہوا تو پھر کیا

دارا و جَم، سکندر، اکبر ہوا تو پھر کیا!

کیا ملک شکیل اعوان منتخب ہو کر اسمبلی میں مطالبہ کریں گے کہ سیاسی پارٹیوں کو مخصوص خاندانوں کے قبضے سے آزاد کرو۔ کیا ملک شکیل اعوان نون لیگ کے پارلیمانی اجلاس میں آواز اٹھائیں گے کہ ایک ہی خانوادے کی اگلی نسل کو لیڈر بنانے کے بجائے پارٹی میں انتخابات کرائو، آخر چوہدری نثار علی خان، احسن اقبال، خواجہ آصف اور جاوید ہاشمی، میں کس چیز کی کمی ہے؟ وہ تین تین سال کیلئے پارٹی کے صدر کیوں نہیں بن سکتے؟ نہیں، کبھی نہیں، شکیل اعوان کبھی نہیں کہیں گے۔ کوئی بھی نہیں کہے گا۔ سیاسی پارٹیوں میں کسی رکن میں ہمت نہیں کہ پارٹی کے اندر الیکشن کا مطالبہ کرے۔

میاں اظہار الحق! تم نے مفت میں دو سو سال کا پینڈا کیا اور راستہ کھوٹا کیا۔ شیخ رشید جیتیں یا شکیل اعوان کامیاب ہوں، نون لیگ ڈھول بجائے یا قاف لیگ بھنگڑا ڈالے یا پیپلزپارٹی ٹھمکا لگائے، تمہاری قوم کو کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ کوئی ہارا تو کیا ہوا اور کوئی جیت گیا تو کیا ہوا؟

گر بادشہ ہو کر عمل مُلکوں ہوا تو کیا ہوا

دو دِن کا نرسنگا بجا، بھوں بھوں ہوا تو کیا ہوا

غُل شور ملک و مال کا کوسوں ہوا تو کیا ہوا

یا ہو فقیر آزاد کے رنگوں ہوا تو کیا ہوا

گر یُوں ہوا تو کیا اور وُوں ہوا تو کیا ہوا

Tuesday, February 09, 2010

بوم بوم آفریدی

کم ہی ایسا ہوا ہوگا کہ منہ اندھیرے رو کر دعا مانگی۔ پھول ساتھ روئے۔ پھر طلوع ہونیوالے سورج کی شعائوں نے پھولوں کے رخساروں سے شبنم کے قطرے صاف کئے، ہرطرف روشنی پھیل گئی اور دعا قبول ہوگئی!… یہی تو میرے ساتھ ہوا!

پانچ فروری کی ٹھٹھرتی صبح تھی، میں منہ اندھیرے اٹھا، آج یوم یک جہتی کشمیر تھا۔ نیم سرد پانی سے وضو کرتے ہوئے میں مسلسل اُس جنت نظیر خطے کے بارے میں سوچ رہا تھا جس پر بھوتوں چڑیلوں چمگادڑوں اور اُلوئوں کا قبضہ ہے‘ جسکے بارے میں کہا جاتا تھا کہ اگر فردوس بر روئی زمین است۔ ہمیں است وہمیں است وہمیں است۔یہ خطہ کب آزاد ہو گا؟  رخساروں پر آنسو گرتے رہے اور ڈھلک ڈھلک کر سفید بالوں میں جذب ہوتے رہے۔
دَھم کی آواز آئی اور پورچ میں اخباروں کا بنڈل گرا۔ میں باہر نکلا۔ دھوپ کا ہر اول دستہ سردی کو پسپائی پر مجبور کررہا تھا۔ میں نے اخبارات کھولے۔ غنچۂ دل وا ہوا، یوں لگا کچھ دیر پہلے میں نے جو آنسو بہائے تھے، قبولیت کا شرف حاصل کرگئے! وزارتوں نے کشمیر کے حوالے سے اخبارات میں پورے پورے صفحوں کے ایڈیشن نکلوائے تھے۔ ان رنگین صفحات پر چھ تصویریں تھیں۔ صدر پاکستان، وزیراعظم پاکستان ، صدر آزاد جموں و کشمیر، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر۔ یہ تصویریں تو چھپنی ہی تھیں۔ ریاستوں اور حکومتوں کے سربراہوں کی تصویریں، پروٹوکول کے حوالے سے، آداب مملکت کے حوالے سے ان مواقع پر شائع ہوتی ہی ہیں، لیکن مرے دل کی کلی تو بقیہ دو تصویریں دیکھ کر کھلی اور مجھ نابکار کو پہلی بار محسوس ہوا کہ ہم الحمد للہ کشمیر کیلئے سنجیدہ ہیں اوراب زنجیروں میں جکڑی اس جنت کی آزادی کے دن اتنے قریب ہیں کہ اپنے بختِ نارسا پر یقین نہیں آرہا۔

جناب وزیراعظم نے دور اندیشی سے کام لیتے ہوئے اور آزادیٔ کشمیر کے مستقبل پر طویل بحث و تمحیص اور سوچ بچار کے بعد ہی جناب میاں منظور احمد وٹو کو وفاقی وزیر برائے امور کشمیر مقرر کیا ہوگا۔ میاں صاحب امور کشمیر کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں۔ ان کی سب سے بڑی صفت جسکا انکے دشمن بھی اعتراف کرتے ہیں اُنکی نظریاتی سیاست ہے۔ استقامت کے اس قدر پکے کہ آج تک میاں صاحب نے پارٹی نہیں بدلی۔ کچھ کوتاہ اندیش یہ سمجھتے ہیں کہ انہوں نے پیپلز پارٹی میں حال ہی میں شمولیت اختیار کی ہے لیکن درحقیقت ایسا نہیں۔ وہ تو ہمیشہ سے پیپلز پارٹی میں تھے۔ چند دن پہلے ایک ساتھی کالم نگار نے ایک وزیر کے بارے میں کمال کا فقرہ لکھا کہ فلاں صاحب کو سیاحت کے طویل تجربے کی بنا پر وزیر سیاحت بنایاگیا ہے۔ اس کالم نگار ساتھی کی اجازت سے ہم بھی اسی وزن پر یہ عرض کرنا چاہتے ہیں کہ میاں صاحب کو امورِ کشمیر میں طویل تجربے کی بنا پر اور کشمیر کی آزادی کیلئے طویل جدوجہد کرنے کی وجہ سے امورِ کشمیر کا وزیر بنایا گیا ہے اور پانچ جنوری کے اخبارات کے اشتہارات میں یہی حقیقت ابھر کر سامنے آئی ہے۔

لیکن کشمیر کے بارے میں ہماری سنجیدگی کی یہ واحد تابناک مثال نہیں۔ اُسی دن سارے اخبارات میں رنگین ایڈیشنوں پر چیئرمین پارلیمانی کشمیر کمیٹی کے طور پر جناب مولانا فضل الرحمن کی تصویر بھی شائع ہوئی ہے۔ یہ ایک حقیقت ہے کہ میاں صاحب کے وزیر امورِ کشمیر اور مولانا صاحب کے کشمیر پارلیمانی کمیٹی کے صدر بننے سے مقبوضہ کشمیر کے مسلمانوں نے گھی کے چراغ جلائے ہیں اور ہندوئوں کے گھروں میں صف ماتم بچھ گئی ہے۔ مولانا بطلِ حریت ہیں اور حق گوئی ہمیشہ ان کی عادت ثانیہ رہی ہے۔ محترمہ بے نظیر بھٹو کے دونوں ادوارِ حکومت میں اور پھر جنرل مشرف کے پورے زمانے میں مولانا صاحب حزبِ اختلاف کی سیاست کرتے رہے اور حکومتوں پر کوڑے کی طرح برستے رہے۔ مولانا صاحب کا سب سے بڑا وصف یہ ہے کہ وہ لگی لپٹی رکھے بغیر سچی بات شمشیرِ برہنہ کی طرح کرتے ہیں اور یہ کبھی نہیں ہوا کہ انکے کسی بیان سے کئی معانی اور کئی مفاہیم نکالے گئے ہوں۔ اسی حق گوئی کے پیش نظر وہ کشمیر کمیٹی کے صدر بنے ہیں اور رات دن کشمیر ہی کیلئے کام کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ انکی شبانہ روز مساعی جمیلہ کی بنا پر آزادیٔ کشمیر کی منزل بالکل صاف سامنے نظر آنے لگ پڑی ہے۔ آپ پروٹوکول یا مراعات وغیرہ پر بالکل یقین نہیں رکھتے۔ اگر انہیں وفاقی وزیر کی مراعات حاصل ہیں تو یہ یقینا ان کی مرضی کیخلاف اُن پر مسلط کی گئی ہیں۔ بالکل اسی طرح جیسے انہوں نے رائے ونڈ کے اجتماع میں جانا ہوتا تھا تو پنجاب کے وزیراعلیٰ انہیں جبراً ہیلی کاپٹر پر بٹھا کر لے جاتے تھے۔ دیوبند تشریف لے گئے تو تب بھی حکومت نے انہیں سخت مجبور کرکے سرکاری ہیلی کاپٹر پر بھیجا۔ انہوں نے ہر گز یہ نہیں کہا تھا کہ ’’ہم پاکستان بنانے کے جرم میں شامل نہیں!‘‘ خدا ستیاناس کرے انگریزوں کا، کیسے کیسے محاورے بناتے ہیں۔ مثلاً LETHAL COMBINATION
، یعنی مہلک مرکب، ہلاک کرنیوالا مجموعہ، میاں صاحب اور
مولانا صاحب ایسا
ہیں کہ اس سے غاصبانِ کشمیر کی ہلاکت قریب آگئی ہے۔ اب بھی اگر لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ پاکستان کشمیر کی آزادی کیلئے سنجیدہ نہیں ہے تو انہیں اپنا دماغی علاج کرانا چاہئے!! کاتبِ تقدیر نے ان دونوں رہنمائوں کی قسمت میں لکھ دیا ہے کہ سری نگر پر پاکستان کا سبز ہلالی پرچم یہ اپنے مقدس ہاتھوں سے لہرائیں گے!!

یہ تو ہماری قومی خوش قسمتی کا صرف ایک ثبوت ہے۔ کیا آپ کو کوئی شک ہے کہ بطور قوم ہم قسمت کے دھنی ہیں؟ ہمیں تو ہر میدان میں اتنی کامیابیاں نصیب ہو رہی ہیں کہ…ع ہر روز روزِ عید ہے ہر شب شبِ برات۔ صاحبزادہ محمد شاہد خان آفریدی نے کرکٹ کے بال کو دانتوں سے کاٹنے کی کوشش کی اور دشمنانِ اسلام ہماری جان کو آگئے حالانکہ صاحبزادہ صاحب نے یہ کہہ کر صفائی بھی پیش کی ہے کہ’’میں تو بال کو سونگھ رہا تھا‘‘! یہ کالم نگار اُس حقیر اقلیت سے تعلق رکھتا ہے جو کرکٹ کو اس ملک کیلئے اسلام کے عروج کا حوالہ سمجھتی ہے! اندازہ لگایئے! بھارت ہر میدان میں ہم سے آگے ہو تو کوئی مضائقہ نہیں۔ جمہوریت، جمہوری ادارے، قانون کی حکمرانی، آئی ٹی کے لحاظ سے پوری دنیا پر غلبہ، پی ایچ ڈی کرنیوالوں کی تعداد، غرض ہر شعبے میں بھارت ہمیں شکست دے رہا ہے لیکن ہمیں سب کچھ منظور ہے۔ ہمارے کان پر جُوں تک نہیں رینگتی، شرم آنے کا تو سوال ہی نہیں پیدا ہوتا۔ مگر جیسے ہی کرکٹ کے میدان میں بھارت سے مقابلہ ہوتا ہے تو ہماری جان پر بن جاتی ہے۔ پوری قوم کارخانے کھیت دفتر سکول کالج ہسپتال بند کرکے ٹیلی ویژن کے سامنے سربسجود ہو جاتی ہے نہ جانے کیوں مسدسِ حالی کے اشعار یاد آرہے ہیں…؎

شریفوں کی اولاد بے تربیت ہے

تباہ اُن کی حالت، بُری ان کی گت ہے

کسی کو کبوتر اُڑانے کی لَت ہے

کسی کو بٹیریں لڑانے کی دھت ہے

کتاب اور معلم سے پھرتے ہیں بھاگے

مگر ناچ گانے میں ہیں سب سے آگے

رہے شاہد آفریدی، تو ہم انکے اسی دن سے قائل ہوگئے تھے جب وہ بال دھونے والے شیمپو اور پیپسی کولا کے اشتہار میں ’’ماڈل‘‘ بن کر آئے۔ یہی تو وہ سنجیدگی اور شائستگی ہے جو کرکٹ کی وجہ سے پوری قوم پر طاری ہے! غلط ہیں وہ جو کہتے ہیں کہ گزشتہ پانچ سو سال میں مسلمانوں نے سائنس اور ٹیکنالوجی میں کچھ نہیں کیا۔ کیا ہم نے پوری دنیا میں بُوم بُوم آفریدی کا نعرہ لگا کر گزشتہ پانچ سو سال کا قرض بمعہ سُود نہیںادا کردیا؟؟

Saturday, February 06, 2010


دکان تھی نہ بورڈ‘ میرا ماتھا ٹھنکا میں نے ڈرائیور سے کہا کہ گاڑی ایک طرف کر کے روکے۔ دکان کے بند دروازے کے سامنے پانی والا اڈا جمائے تھا۔ میں نے اس سے پوچھا کہ یہاں ایک دکان ہوا کرتی تھی۔

’’وہ بیچ کر چلا گیا‘‘ ’’کہاں؟ معلوم نہیں!

اس کالم نگار نے اپنی ملازمت کا آغاز ستر کی دہائی میں کراچی سے کیا تھا۔ اس وقت سے لے کر آج تک الفنسٹن سٹریٹ (جو اب زیب النسا سٹریٹ کہلاتی ہے) اور زینب مارکیٹ کا علاقہ میرا پسندیدہ علاقہ رہا ہے لیکن اس علاقے کے ساتھ جو المیے وابستہ ہیں وہ بہت درد ناک ہیں!

ستر کی دہائی میں الفنسٹن سٹریٹ میں کتابوں کی کئی دکانیں تھیں اگر آپ ریگل سینما کی طرف سے داخل ہوں تو دائیں طرف ’’کتاب محل‘‘ تھی۔ جہاں اردو کی ادبی کتابیں میسر تھیں۔ یہ دکان عرصہ ہوا وفات پا چکی۔ امریکن بک کمپنی چند سال قبل اپنے انجام کو پہنچی۔ اب دو دکانیں بچی تھیں ۔ ریگل چوک پر ’’تھامس اینڈ تھامس‘‘ اور دوسرے کنارے پر زینب مارکیٹ کے سامنے والماس بک شاپ۔ کراچی کے حالیہ سفر میں معلوم ہوا کہ الماس بک شاپ بھی اس قوم کی ’’علم نوازی‘‘ کی نذر ہو چکی۔ اناللہ وانا الیہ راجعون!

کلاسیکی اور جدید فارسی کتابوں کے اس مرکز ’’الماس بک شاپ‘‘ کا مالک آقائی علی اصغر فرزانہ ایک عمر رسیدہ شخص تھا۔ یہ ممکن نہ تھا کہ میں کراچی جاؤں اور کچھ وقت اس کے ساتھ نہ بسر کروں۔ اس سے مجھے دو فائدے حاصل ہوتے تھے۔ ایک تو میری زنگ آلود فارسی زبان زندگی کی انگڑائی لے لیتی تھی۔ دوسرے‘ میں ایران کی چھپی ہوئی دیدہ زیب کتابیں دیکھ لیتا تھا اور جب بھی جیب اجازت دیتی کچھ خرید بھی لیتا۔ اور جب انہیں لئے واپس گھر آتا تو ہر طرف سے کتابوں کے انبار میں گھری بیگم کی بے بسی میں کچھ اور اضافہ ہو جاتا۔

پاکستان کی معیشت پر کسی نے تبصرہ یوں کیا تھا کہ جتنا اضافہ موٹر کاروں کی تعداد میں ہو رہا ہے اتنا ہی اضافہ گداگروں کی تعداد میں ہو رہا ہے۔ مجھ سے اگر کہا جائے کہ پاکستان کے تہذیبی زوال کو ایک فقرے میں بیان کرو تو میں کسی جھجک کے بغیر کہوں گا کہ لائبریریاں تو پہلے ہی نہیں تھیں‘ کتابوں کی جو دکانیں تھیں بھی‘ ایک ایک کر کے اپنی موت مر رہی ہیں اور ریستوران کی تعداد میں اسی حساب سے اضافہ ہو رہا ہے! کیا آپ کو معلوم ہے کہ پورے راولپنڈی میں کوئی قابل ذکر لائبریری موجود نہیں اور ایک نیشنل لائبریری جو اسلام آباد میں زرِ کثیر خرچ کر کے قائم کی گئی ہے وہ وزیر اعظم کے دفتر کی بغل میں واقع ہونے کی وجہ سے عوام کی رسائی سے مکمل طور پر باہر ہے۔ امریکیوں اور انگریزوں نے جو برٹش کونسل لائبریریاں اور یو ایس آئی ایس لائبریریاں بنائی تھیں وہ ہمارے ……کی نذر ہو گئی ہیں! رہیں ہماری ترجیحات! تو اس میں کتاب کا ذکر ہی نہیں۔ لاہور میں ایک فاسٹ فوڈ کھلا تو پہلے دن 35ہزار گاہک فیض یاب ہوئے۔ کتابوں کی دکان کھول کر دیکھیں‘ ہوش ٹھکانے آجائیں گے۔ ’’بار ڈر‘‘ اور ’’واٹر سٹون‘‘ کتابوں کی بین الاقوامی دکانیں ہیں اور پاکستان کے سوا دنیا کے تمام بڑے ملکوں میں پائی جاتی ہیں۔ مجھے یاد ہے سنگا پور میں ’’بارڈر‘‘ کی وسیع و عریض دکان (جس کے اندر کئی پلازے تعمیر ہو سکتے ہیں) لوگوں سے چھلک رہی تھی۔ اخبارات کے مطالعے کی اجازت نہ تھی لیکن کتابیں وہاں بیٹھ کر پڑھی جا سکتی تھیں اور وقت کی کوئی پابندی نہیں تھی۔ کتاب خریدنے کے بعد پندرہ دن کے اندر اندر واپس بھی کی جا سکتی تھی! نوجوان لڑکوں اور لڑکیوں کا اس قدر ہجوم تھا جیسے میلہ لگا ہو‘ یہی حال لندن میں ’’واٹر سٹون‘‘ کا ہے کئی منزلوں پر مشتمل یہ ’’دکان‘‘ مرجعِ خلائق ہے۔ اس کے اندر ریستوران بھی ہے اور چائے خانہ بھی۔ بیٹھنے کیلئے صوفے اس طرح ہر منزل پر پڑے ہیں جیسے گھروں کے ڈرائینگ روم ہوں۔ ہر موضوع پر کتابیں ہیں اور لاکھوں کی تعداد میں ہیں۔ صبح سے شام تک شاید ہی کوئی ایسا وقت ہو کہ اژدہام میں کمی واقع ہو!

سوال یہ ہے کہ آخر پاکستانی کتاب دوست کیوں ہوں؟ عربی کا مقولہ ہے کہ ’’الناس علیٰ دینِ ملوکِھِم‘‘ یعنی عوام بادشاہوں کے طور طریقوں کی پیروی کرتے ہیں۔ کیا ہمارے حکمران (یعنی سیاست دان) کتابوں سے علاقہ رکھتے ہیں؟ نہ جانے حقیقت ہے یا محض افسانہ لیکن مشہور ہے کہ ایک وزیر اعظم ملائیشیا تشریف لے گئے تو ہوائی اڈے سے سیدھے فاسٹ فوڈ کی دکان پر گئے ایک اور وزیر اعظم نے اسلام آباد کے ایک مرکزی چوک پر لگے گلوب کو سیدھا کرا دیا۔ انہیں معلوم ہی نہیں کہ گلوب ہمیشہ ایک طرف کو جھکا ہوا ہوتا ہے! صدر مشرف نے اسمبلیوں میں آنے کے لئے بی اے کی شرط رکھی (وجوہ کچھ بھی تھیں) تو سیاست دانوں میں گریہ و زاری کے عبرت ناک مناظر دیکھنے میں آئے۔ کچھ نے تو ضعفِ پیری کے باوجود امتحان بھی پاس کئے۔ قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے ارکان میں تعلیم کا تناسب جاننے کیلئے تحقیق کی ضرورت ہے نہ اعداد و شمار کی۔ ٹیلی ویژن پر اپنی گفتگو سے جس طرح یہ اصحاب ’’متاثر‘‘ کرتے ہیں اس کے بارے میں کچھ نہ کہا جائے تو بہتر ہے۔ اس کے مقابلے میں دوسرے ملکوں کو دیکھئے‘ سنگا پور‘ کینیڈا اور فرانس کو تو چھوڑیے‘ بھارت میں کابینہ کے نصف ارکان پی ایچ ڈی ہیں۔ وزیر اعظم من موہن سنگھ نے صرف برطانیہ سے پی ایچ ڈی ہیں بلکہ بیرونِ ملک کی یونیورسٹیوں میں پڑھاتے بھی رہے ہیں۔

آج ہم تاریخ کے جس دوراہے پر پریشان کھڑے ہیں اس تک پہنچانے میں ہماری کتاب دشمنی کا کردار بہت نمایاں ہے! آپ کا کیا خیال ہے سوات‘ شمالی وزیرستان‘ جنوبی وزیرستان‘ باجوڑ اور اورکزئی ایجنسی میں کتنے کتاب گھر ہونگے؟ چلئے کتاب گھروں کو بھی چھوڑیئے‘ یہ سوچیئے ان علاقوں میں گزشتہ باسٹھ برسوں کے دوران کتنی یونیورسٹیاں کتنے کالج قائم ہوئے؟ قلات‘ خضدار‘ لورا لئی‘ ژوب اور چمن میں کتنی یونیورسٹیاں ہیں؟ قدرت کسی کی رشتہ دار نہیں! اگر آپ یونیورسٹیاں‘ کالج‘ کتاب گھر اور لائبریریاں نہیں قائم کریں گے تو سائنس دان اور پروفیسر نہیں پیدا ہونگے‘ بندوق فروشوں کے علاقوں میں بندوق بردار ہی نظر آئیں گے۔ تنبے کے درخت پر سیب ڈھونڈنے والے کو اپنے دماغ کا علاج کرانا چاہئے۔ لاکھوں ناخواندہ افراد سائنس دان بن سکتے ہیں نہ پروفیسر صحافی بن سکتے ہیں نہ ڈاکٹر‘ ہاں وہ بندوقچی ضرور بن سکتے ہیں کیونکہ بندوقچی بننے کیلئے تعلیم کی ضرورت ہے نہ تہذیب کی‘ عرصہ ہوا کسی نے کہا تھا کہ ایک طرف ڈاکٹر عبدالسلام کھڑا ہو اور دوسری طرف محمد علی شہکی تو سارا ہجوم شہکی کی طرف لپکے گا۔ اس کا مظاہرہ پچلھے دنوں بھی ہوا۔ دانشور اور صحافی ارشاد احمد حقانی کے جنازے میں دو یا اڑھائی سو افراد شریک ہوئے اسی دن لاہور میں ٹیپو ٹرکاں والے کا جنازہ بھی تھا۔ اس میں شریک ہونے والے سوگواروں کی تعداد ہزاروں میں تھی ٹیپو ٹرکاں والا ’’طاقت‘‘ کا نمائندہ تھا۔ مار دھاڑ کرنے والے اور پولیس والے سارے اس کے عقیدت مند تھے۔ جس معاشرے میں پٹواری اور ایس ایچ او ایک پی ایچ ڈی پروفیسر کی نسبت زیادہ معزز ہوں‘ وہاں لوگ کس کی موت پر زیادہ سوگوار ہونگے؟ یہ جاننے کیلئے یوں بھی پی ایچ ڈی ہونا ضروری نہیں!

Tuesday, February 02, 2010


ٹرین کے ڈبے میں ایک صاحب نے سامنے بیٹھے ہوئے بزرگ سے پوچھا ’’آپ کی تعریف؟‘‘

’’برخوردار! میرا نام حفیظ ہے‘‘! بزرگ نے بتایا۔ پوچھنے والے کے چہرے پر کوئی تاثر نہ ابھرا۔ بزرگ نے دوبارہ بتایا ’’میں حفیظ ہوں۔ شاہنامہ اسلام کا خالق‘‘ برخوردار کی رگِ شناخت اب بھی نہ پھڑکی۔ بزرگ نے ایک بار پھر زور سے کہا

’’ارے بھئی! میں حفیظ ہوں۔ وہی حفیظ جس نے پاکستان کا قومی ترانہ لکھا ہے‘‘ لیکن یوں لگا جیسے برخوردار نے قومی ترانہ کبھی سنا ہے نہ … اس کی اہمیت کا اسے احساس ہے۔ تھک ہار کر حفیظ نے کہا ’’ارے میاں! میرا نام حفیظ جالندھری ہے‘‘ بس یہ سننا تھا کہ برخوردار کو جیسے بجلی کا کرنٹ لگ گیا۔ وہ اٹھا، حفیظ صاحب کو پکڑ کر سیٹ سے اٹھایا اور اپنے سینے سے بھینچتے ہوئے بولا۔ اچھا تو آپ بھی جالندھر کے ہیں!

معلوم نہیں یہ واقعہ ہے ‘ یا محض لطیفہ! لیکن یہ جو کچھ بھی ہے ہماری قومی نفسیات کی مکمل تشریح کرتا ہے! ہم تحسین بھی کرتے ہیں تو برادری کی بنیاد پر اور تنقیص بھی کرتے ہیں تو اسلئے کہ جس میں برائی ہے وہ ہماری برادری سے نہیں ہے!

تعلیم یافتہ اصحاب انتہائی درد سے دیہی علاقوں کے ان پڑھ لوگوں پر تنقید کرتے ہیں کہ وہ برادری کی محبت میں اندھے ہیں اور ووٹ دینے یا نہ دینے کا فیصلہ محض اس بنیاد پر کرتے ہیں کہ امیدوار کس برادری سے تعلق رکھتا ہے لیکن کیا اس جرم کا ارتکاب کرنیوالے صرف ان پڑھ ہیں؟اس سے بڑا المیہ کیا ہو گا کہ ایک ملازمہ مبینہ طور پر تشدد سے ہلاک ہوتی ہے۔ ملزموں پر مقدمہ چلتا ہے۔ یہ محض اتفاق ہے کہ ملزم وکیل ہے۔ عدالت میں پیشی کے دن ملزم کی ’’برادری‘‘ کے لوگ اکٹھے ہو کر ہنگامہ کرتے ہیں۔ وہ پورے شہر سے امڈ کر آتے ہیں وہ مقتولہ کے پسماندگان کو کمرہ عدالت میں داخل ہی نہیں ہونے دیتے اور میڈیا کے نمائندوں کو ایک کونے میں دھکیل دیتے ہیں۔ ملزم کی ’’برادری‘‘ کے لوگ بلند آواز سے گالیاں دیتے ہیں اور میڈیا کیخلاف نعرے لگاتے ہیں۔

انہیں اس بات کا غم ہے کہ ملزم لاہور بار ایسوسی ایشن کا سابق صدر ہے، اسکے باوجود میڈیا کی یہ جرأت کہ اسکے بارے میں خبر نشر کر دی! چاہئے تو یہ تھا کہ ’’برادری‘‘ اپنے آدمی کا عدالت میں دفاع کرتی، دلائل دیتی اور ثبوت سے عدلیہ کو قائل کرتی لیکن افسوس! اہم بات یہ نہیں کہ سچ کیا ہے، اور اخلاق اور قانون کیا کہتا ہے؟

اہم بات یہ ہے کہ ہم نے ہر حال میں اپنے دوست، اپنے رشتہ دار، اپنے رفیق کار، اپنے لیڈر، اپنے پیر، اپنے پیر بھائی، اپنے ہم مذہب کی حمایت کرنی ہے۔ انصاف بھاڑ میں جائے!’’وفاداری‘‘ کا یہ جاگیردارانہ تصور پاکستان کے ان پڑھوں ہی میں نہیں، اعلیٰ تعلیم یافتہ لوگوں میں بھی موجود ہے اور یہی اس ملک کا سب سے بڑا المیہ ہے۔ وفاداری کا جاگیردارانہ تصور یہ ہے کہ اگر آپکا دوست، رشتہ دار یا برادری کا کوئی شخص کسی مسئلے سے دوچار ہے تو یہ نہ دیکھیں کہ وہ غلط ہے یا صحیح، مجرم ہے یا مظلوم، بس آنکھیں بند کرکے اسکی حمایت کریں‘ یہی ہمارا فرض ہے اور یہی وفاداری کا تقاضا ہے! اگر بارہ سالہ بچی کے بے جان جسم پر اٹھارہ زخم ہیں تو کیا ہوا!

اور صرف وکیل برادری کو کیوں مطعون کیا جائے؟ ڈاکٹروں کا طرز عمل بھی یہی رہا ہے! جب بھی کسی ڈاکٹر پر مقدمہ چلا ہے، یا کسی مریض کے لواحقین نے کسی ڈاکٹر کی سنگدلی یا غفلت کیخلاف آواز بلند کی ہے تو ڈاکٹر اپنے ساتھی کی حمایت میں سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑے ہو گئے ہیں۔ ہڑتال کر دی گئی ہے۔ مریض ہسپتالوں کے برآمدوں میں ذلیل و خوار ہو گئے ہیں۔ کیا کسی مہذب ملک میں ایسا ہوا ہے؟ امریکہ اور یورپ میں آئے دن ڈاکٹروں کیخلاف مقدمے قائم ہوتے ہیں، مریض اور انکے لواحقین عدالتوں میں جاتے ہیں لیکن کبھی ایسا نہیں ہوا کہ ڈاکٹروں نے ’’برادری‘‘ کی بنیاد پر ہنگامہ کھڑا کیا ہو۔ تاجر برادری اس کارِخیر میں کسی سے پیچھے نہیں۔

بارہا ایسا ہوا کہ پولیس نے کسی جرم کی بنیاد پر ایک دکاندار کو گرفتار کیا۔ آن کی آن میں مارکیٹیں بند ہو گئیں۔ شٹر ڈائون ہو گئے، یہ کسی نے نہ پوچھا کہ گرفتار ہونیوالے کا کیا جرم ہے؟ کس نے شکایت کی اور کیا گرفتاری بلاجواز ہے؟ ہمارے منتخب نمائندے تو اس رجحان کے معماروں سے ہیں! جب بھی مراعات کا معاملہ ہوتا ہے، حزب اختلاف اور حزب اقتدار باہم متحد ہو جاتے ہیں۔ جب بھی زرعی اصلاحات کے حوالے سے کوئی آواز اٹھتی ہے، جو کتنی ہی نحیف کیوں نہ ہو، سارے طرے اور سارے شملے اکٹھے ہو جاتے ہیں اور اقبال کا یہ شعر بے اختیار یاد آ جاتا ہے…؎

باطل کے فال و فر کی حفاظت کے واسطے

یورپ زرہ میں ڈوب گیا دوش تا کمر

ان گنہگار آنکھوں نے بڑے بڑے فقیر اور حق گو پارلیمانی ارکان کو مراعات کے حق میں تقریریں کرتے اور دلائل دیتے سنا ہے۔ یہی حال ’’استحقاق‘‘ کا ہے۔ ’’ہمارے‘‘ فون کیوں نہ سنے گئے؟ ہماری سفارشیں کیوں نہ مانی گئیں اور تو اور جہاز میں ہمیں فلاں نشست کیوں نہ دی گئی؟ حالانکہ پوری دنیا میں جہاز کی اگلی نشستیں ان خواتین کیلئے مختص ہوتی ہیں جن کی گود میں بچے ہوں! ان گنہگار آنکھوں نے یہ بھی دیکھا کہ گود میں بچہ اٹھائی ہوئی خاتون سے کہا گیا کہ آپ پیچھے چلی جائیں، یہاں وزیر یا کسی بڑے صاحب نے بیٹھنا ہے! ساقی فاروقی کا شعر ہے…؎

ان موذیوں پہ قہر الٰہی کی شکل میں

نمرود سا بھی خانہ خراب آئے تو ہے کم

اس معاشرے میں، مجھ سمیت، ہر شخص چاہتا ہے کہ معاشرہ درست ہو جائے لیکن افسوس! مجھ سمیت ہر شخص چاہتا ہے کہ درستی کا آغاز مجھ سے نہ ہو۔ مجھے کچھ نہ کہا جائے! اصلاح کا کام دوسروں سے شروع ہوا اور دوسروں ہی پر ختم ہو۔

کل کے اخبار میں ہمارے دوست سعید آسی نے اپنے کالم میں یہ ہوشربا خبر دی ہے کہ صوبائی وزیر قانون اپنا غیر قانونی پلازا گرانے پر تیار ہیں لیکن انہوں نے شرط یہ عائد کی ہے کہ پہلے صدر زرداری استعفیٰ دیں ‘ یہ بالکل ویسے ہی ہے جیسے تاجر برادری سے ٹیکس پورا مانگا جائے تو وہ مطالبہ کرتی ہے کہ پہلے یہ بتایا جائے کہ ٹیکس استعمال کہاں ہو رہا ہے اور ہمیں ٹیکس کے بدلے میں کیا مل رہا ہے یا کیا ملے گا؟ انصاف اس معاشرے میں موجود ہے لیکن صرف اس شرط پر کہ انصاف کے کٹہرے میں مجھے نہ کھڑا کیا جائے اور میری برادری کے کسی رکن کو بھی کچھ نہ کہا جائے۔

یہ کارِ خیر کسی اور طرف سے شروع ہو تو بہتر ہے! مانا کہ کرنل کی ہلاکت میں چیف سیکرٹری کا کوئی قصور نہیں، لیکن چیف سیکرٹری کا ساتھ آتی ہوئی خالی کار میں بیٹھ کر جائے حادثہ سے کمال بے نیازی کیساتھ رخصت ہو جانا کیا قصور نہیں! اندازہ لگائیے، جس ملک میں لوگ پٹرول کی ایک ایک بوند اور سی این جی کے ایک ایک کلوگرام کیلئے ترس رہے ہیں چیف سیکرٹری کی کار کیساتھ ساتھ دوسری کاریں بھی محوِ خرام ہیں، واہ! واہ! سبحان اللہ! حادثہ ہوتا ہے، صاحب کار سے اترتے ہیں اور دوسری کار میں سوار ہو کر سفر جاری رکھتے ہیں۔

اگر خادم پنجاب اس بے نیازی پر (چلئے، بے حسی کی جگہ بے نیازی کا لفظ ہی سہی!) اس رجلِ رشید کو چیف سیکرٹری کے عہدے سے ہٹا دیتے تو یہ اقدام بالکل جائز اور منطقی ہوتا لیکن بات برادری کی ہے، چیف منسٹر ہو یا چیف سیکرٹری! چیف کا سابقہ تو مشترک ہے! کیا کوئی ایسی صبح طلوع ہو گی جب ہم بھی مہذب ملکوں کی طرح برادری کو بھاڑ میں جھونک کر صرف انصاف کی بات کرینگے؟ انصاف ‘سو فیصد انصاف! لیکن شاید ابھی نہیں! ابھی کچھ دیر ہے…؎

نالہ ہے بلبل شوریدہ ترا خام ابھی

اپنے سینے میں ذرا اور اسے تھام ابھی

powered by worldwanders.com